بدعت کا بیان

 کفر اور شرک کے بعد سب سے بڑا گناہ بدعت ہے بدعت کی تعریف بدعت اُن چیزوں کو کہتے ہیں جن کی اصل۔شریعت سے ثابت نہ ہو۔ اور شرع شریف کی چاروں دلیلوں یعنی کتاب اللّٰہ وسنت رسولﷺ و اجماع امت و قیاس مجتہدین سے ثبوت نہ ملے اور اس کو دیں کا کام سمجھ کرکیاجائےیاچھوڑاجائے۔ بدعت بری چیز ہے خواہ اس کا موجد کوئی بھی کیوں نہ ہو۔ حضورِﷺنےایسی ہر بدعت کو گمراہی اور دوزخ میں پہچانے والی فرمایا ہے،لوگوں نے ہزارہا بدعتیں پیدا ہونے سے مرنے تک نکالی ہیں جو ہر زمانے اور ہر ملک میں مختلف ہیں۔ جن کا احاطہ کرنا نہایت مشکل ہے اور یہی بدعت کی بڑی شناخت ہے۔ کیونکہ سنت ہر جگہ اور ہر زمانے میں یکساں ہے۔لوگوں میں بکثرت بدعتیں رائج ہیں جن کو اکثر لوگ جائز سمجھتے ہیں یا گناہ بھی سمجھتے ہیں تو ہلکا سمجھ کر پرواہ
نہیں کرتے نہ خود رکتے ہیں اور۔نہ دوسروں کو روکتے ہیں چند مشہور بدعتیں یہ ہیں :
1– پختہ قبر بنانا،قبروں پر گنبد بنانا،قبروں پر دھوم دھام سے میلہ اور چراغاں کرنا،عورتوں کا وہاں جاناقبروں پر چادریں اور غلاف چڑھانا،اپنے خیال میں بزرگوں کو راضی کرنے کے لئے قبروں کی حدسےزیادہ تعظیم کرنا
2– تعزیہ یا قبر کو چومنا چاٹنا،قبروں کی خاک ملنا،قبروں کی طرف نماز پڑھنا،۔ مٹھائی،گلگلے،چوری وغیرہ چڑھانا         
3– تعزیہ کوسلام کرنا                  
  4– تیجا دسواں اور چالیسواں وغیرہ ضروری سمجھ کر کرنا
5– نکاح ختنہ بسم اللّٰہ وغیرہ میں رسمیں کرنا خصوصاً قرض لے کر ناچ گانا کرنا  
6– سلام کی جگہ بندگی آداب وغیرہ کہنا یا سر پر ہاتھ رکھ کر جھک جانا
7– راگ با جا،گانا سننا خصوصاً اس کو عبادت سمجھنا،ڈومنیوں وغیرہ کو نچانا اور دیکھنا اور اس پر خوش ہوکران کو انعام دینا
8– نسب پر فخر کرنا                       
9- دولہا کو خلاف شرع لباس پہنانا    
10– آتش بازی وغیرہ کا  سامان کرنا  
11- فضول آرائش کرنا
Advertisements
3 comments
  1. آپ کی تحریر میں مندرجہ ذیل تصحیح کی ضرورت ہے
    قبروں کی طرف نماز پڑھنا بدعت سے بڑھ کر ہے ۔ شرک میں آتا ہے
    تیجا دسواں اور چالیسواں وغیرہ کرنا ہی بدعت ہے
    راگ با جا،گانا سننا ،ڈومنیوں وغیرہ کو نچانا اور دیکھنا گناہ ہے بدعت سے زیادہ
    نسب پر فخر کرنا بدعت نہیں کِبر ہے
    مزید بدعات عام ہیں ۔ شبِ براءت کے حوالے سے حلوہ پکانا ۔ گیارہویں کا ختم دلانا ۔ کُونڈے بھرنا ۔ میلادالنبی کا جلوس اور محفلِ میلاد

    • چونکہ لوگ اسے عبادت کی نہیں تعظیم کا نام دیا کرتے ہیں
      اور سجدۂ تعظیمی کہتے ہیں
      اور کسی بھی صورت نہیں مانتے کہ ہم نے یہ سجدہ عبادت کی نیت سے کیا
      حالانکہ سجدہ کوئی بھی ہو تعظیمی یا عبادت کی غرض سے
      بلا شبہ شرک ہے
      پر یہاں خاص تعظیمی کہ جو عبادت کی نہیں بلکہ تعظیماً کررہے ہیں اس کےو بدعت کہا گیا ہے
      میں کسی بھی کام پر شرک کا لفظ استعمال کرنے میں احتیاط برتتی ہوں

  2. نبر 9، 10، 11 گناہ تو ہے لیکن بدعت نہیں کیونکہ انہیں دین سمجھ کر نہیں کیا جاتا

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: