حضرت اُمِّ حبیب ؓ

حضرت اُمِّ حبیب ؓ حضور اکرم کی چچا زاد بہن تھیں۔ ان کی والدہ کا نام اُمِّ الفضل ؓ ہے۔ آپ کے سگے بھائی فضل، عبداﷲ، عبیداﷲ، عبدالرحمن، قثم اور معبد ہیں جو سب حضرت عباس ؓ کے بیٹے ہیں۔
حضور اکرم اپنے چچا حضرت عباس ؓ کی نہایت تعظیم و توقیر فرمایا کرتے تھے اور ان کی معمولی تکلیف سے بھی آپ کو تکلیف ہوتی تھی۔ ایک بار حضرت عباس ؓ نے عرض کیا کہ :قریش جب آپس میں ملتے ہیں تو ان کے چہروں سے تازگی وشگفتگی برستی ہے مگر جب ہم سے ملتے ہیں تو برہمی کے آثار ان کے چہرے سے نمایاں ہوتے ہیں۔ یہ سن کر حضوراکرم غضبناک ہوگئے اور فرمایا ’’قسم ہے اس ذات کی! جس کے ہاتھ میں میری جان ہے کہ جو شخص خدا اور رسول خدا کے لئے تم لوگوں سے محبت نہ کرے گا، اس کے دل میں نور ایمان نہ ہوگا۔ چچا باپ کے قائم مقام ہے‘‘
حضرت عبداﷲ ؓ بن عباس ؓ سے روایت ہے کہ :ایک بار حضور اکرم نے حضرت اُمِّ حبیب ؓ کو انکےبچپن میں دیکھا۔ جب وہ گھٹنوں کے بل چلتی تھیں۔ حضرت اُمِّ حبیب ؓ کے بچپن ہی میں حضور اکرم کا وصال ہوگیا۔ حضرت اُمِّ حبیب ؓ کا نکاح اسود بن سفیان بن عبداﷲ مخزومی سے ہوا۔ اسود بن سفیان سے رزق اور لبابہ پیدا ہوئے۔ حضرت اُمِّ حبیب ؓ نے اپنی والدہ لبابہ یعنی اُمِّ الفضل ؓ کے نام پر اپنی بیٹی کا نام اُمِّ الفضل لبابہ رکھا۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: