حضرت جمانہ ؓ

حضرت جمانہ ؓ حضور اکرم کے محبوب چچا جناب ابوطالب کی بیٹی تھیں۔حضرت جمانہ ؓ کے متعلق بہت کم  معلومات ملتی ہیں۔

 قاضی سلیمان منصور پوری لکھتے ہیں کہ :جناب ابو طالب کی اولاد میں جمانہ ؓ کا نام بھی ملتا ہے مگر ان کے حالات سے کوئی آگاہی نہیں ہوتی۔
ابن اسحاق امام اہل السیر نے لکھا ہے کہ :حضور نے پیداوار ِخیبر میں سے 30وسق خرما جمانہ ؓ دختر ابی طالب کےلئےمقرر فرمائے تھے۔
اسی فقرے سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ وہ خلعت اسلام سے مشرف تھیں اور یہ بھی ظاہر ہوا کہ فتح خیبر تک حیات تھیں۔
حضرت جمانہ ؓ حضور کے ان مہربان چچا کی بیٹی تھیں جنہوں نے حضور کو اپنی اولاد سے بڑھ کر چاہا۔ 40سال سے زیادہ عرصے تک قوت پہنچائی، اپنی حمایت کا سایہ دراز رکھا اور اپنی زندگی کے آخری لمحہ تک آقائے نامدار حضور کے ہمدرد اور غمگسار رہے۔ حضرت جمانہ ؓ کی والدہ محترمہ حضرت فاطمہ ؓ بنت اسد حضور کی پرورش و خدمت اور محبت میں اپنے شوہر کا ساتھ دیتی رہیں۔ ان کی پرورش و خدمت کی گواہی خود حضور نے دی۔ جب حضور نےدعوت حق کا آغاز کیا تو فاطمہ ؓ بنت اسد نے اس دعوت پر اسلام قبول کیا۔
حضرت جمانہ ؓ کے بہن بھائیوں سے حضور بہت پیار کرتے تھے۔ حبشہ سے جب حضرت جعفر ؓ طیار خیبرکےمقام پر پہنچے تو انہیں دیکھ کرآقائے نامدار حضور نے فرمایا تھا ’’میں نہیں کہہ سکتا کہ مجھے خیبر کی زیادہ خوشی ہےیاجعفرؓکے آنے کی‘‘
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

w

Connecting to %s

%d bloggers like this: