حضرت عائشہ ؓصدیقہ ؓ:01

حضرت عائشہ صدیقہ ؓ حضرت ابوبکر صدیقؓ کی صاحبزادی ہیں۔ والدہ کے نام میں اختلاف ہے بعض نے زینب بتایا ہے لیکن وہ اپنی کنیت   اُمِ رُومان    سے مشہور ہیں۔
آنحضرت کی صرف یہی ایک بیوی ہیں جن سے کنوارے پن میں آپ نے نکاح کیا۔ اِن کے علاوہ آپ کی تمام بیویاں بیوہ تھیں۔ آنحضرت کو نبوت ملنے کے چار پانچ سال بعد اِن کی ولادت ہوئی اور چھ سال کی عمر میں آنحضرت سے نکاح ہوا اور نو سال کی عمر میں رخصتی ہوئی۔ نکاح مکّہ معظمہ میں ہوا اَور رُخصتی ہجرت کے بعد مدینہ منورہ میں ہوئی۔
آنحضرت کی خدمت میں نو سال رہیں جس وقت سیدِ عالم نے مَلَائِ الْاَعْلٰی کا سفر اختیار فرمایا: اُس وقت اِن کی عمر١٨ سال تھی۔ ( اصابہ۔جمع الفوائد۔ بخاری شریف)

نکاح

جب حضرت خَدیجہؓ  کی وفات ہو گئی تو حضرت خولہ بنتِ حکیمؓ نے سیدِعالم سے عرض کیا کہ یا رسول اللہ!کیاآپ نکاح نہیں کر لیتے؟ آپ نے فرمایا: کس سے؟ عرض کیا آپ چاہیں تو کنواری سے کر لیں اور چاہے تو بیوہ سے۔ آنحضرت نے فرمایا: کنواری کون ہے؟ اُنہوں نے جواب دیا مخلوق میں جو آپ کو سب سے محبوب ہیں اُن کی بیٹی  یعنی عائشہ بنت ابی بکر(صدیق) ؓ آپ نے دوبارہ سوال فرمایا: بیوہ کون ہے؟ جواب دیا سودہ بنت زمعہ جو آپ پر ایمان لا چکی
ہیں اور آپ کا اتباع کرتی ہیں۔
یہ سن کر آنحضرت نے فرمایا: بہتر ہے جاؤ دونوں جگہ میرا پیغام لے جاؤ چنانچہ حضرت خولہ پہلے حضرت ابوبکرصدیقؓ کے گھر پہنچیں۔ اُس وقت حضرت صدیقِ اکبر ؓتشریف نہ رکھتے تھے۔ اُن کی بیوی سے کہا اے اُمِ رومان کچھ خبر بھی ہے اللہ نے کس خیر و برکت سے تم کو نوازنے کا اِرادہ فرمایا: ہے؟ اُنہوں نے سوال کیا وہ کیا؟ جواب دیا:مجھےرسول اللہ نے عائشہ سے نکاح کرنے کا پیغام دے کر بھیجا ہے۔ حضرت اُمِ رومان نے جواب دیاذرااَبوبکرؓکےآنے کا انتظار کرو۔چنانچہ تھوڑی دیر میں وہ بھی تشریف لے آئے۔ اُن سے بھی حضرت خولہ ؓنے یہی کہا کہ اے ابو بکر کچھ خبر بھی ہے اللہ تعالیٰ نے تم کو کس خیر و برکت سے نوازنے کا اِرادہ فرمایا: ہے؟ بولے وہ کیا؟ جواب دیامجھے رسول اللہ اِس مقصد کے لیے بھیجا ہے کہ عائشہ سے نکاح کے بارے میں آپ کا پیغام پہنچا دوں۔
یہ سن کر حضرت صدیق اکبر ؓنے کہا کہ وہ تو آنحضرت کی بھتیجی ہے (کیونکہ میں آپ کا بھائی ہوں )کیااِس سے آپ کا نکاح ہو سکتا ہے؟ اِس سوال کا جواب لینے کے لیے حضرت خولہ بارگاہِ رسالت میں واپس پہنچیں اَور حضرت صدیقِ اکبرکااشکال سامنے رکھ دیا۔ اِس کے جواب میں آنحضرت نے فرمایا: کہ ابو بکر سے کہہ دو کہ تم اور میں دینی بھائی ہیں،تمہاری لڑکی سے میرا نکاح ہو سکتا ہے۔ (رشتہ کے حقیقی یا باپ شریک یا ماں شریک بھائی کی لڑکی سے نکاح دُرست نہیں ہے،دینی بھائی کے لڑکی سے نکاح جائز ہے )
چنانچہ حضرت خولہ واپس حضرت صدیقِ اکبر کے گھر آئیں اور شرعی فتوی جو بارگاہِ رسالت سے صادر ہوا تھا اُسکااظہارکردیاجس پر حضرت صدیقِ اکبر حضرت عائشہ ؓسے آپ کا نکاح کر دینے پر راضی ہو گئے اور آنحضرت کو بلا کر اپنی بیٹی عائشہ کا نکاح کر دیا۔ اِس کے بعد حضرت خولہ حضرت سودہ  ؓکے پاس گئیں اور اُن کے اِشارہ سے اُن کے والد زمعہ سےگفتگوکی ۔آنحضرت سے حضرت سودہ  ؓکا نکاح کر دینے پر راضی کر لیا اور نکاح کرا دیا۔ 

ہجرت

آنحضرت نے حضرت خولہؓ کے مشورہ اور کوشش سے حضرت عائشہ ؓاور حضرت سودہ  ؓسے نکاح فرمایا:لیکن چونکہ حضرت عائشہ ؓکی عمر بہت کم(صرف ٦ سال ) تھی اِس لیے رُخصتی ابھی ملتوی رہی البتہ حضرت سودہ  ؓکی رُخصتی بھی ہو گئی اور آپ کے دولت کدہ پر تشریف لے آئیں اور گھر کی دیکھ بھال اِن کے سپرد ہوئی۔اِسکےبعدہجرت کا سلسلہ شروع ہو گیا اور حضرات صحابہ مدینہ منورہ پہنچنے لگے بلکہ اکثر پہنچ گئے۔ حضرت صدیقِ اکبر نے بھی بار ہا آنحضرت سے ہجرت کی اجازت چاہی لیکن آپ فرماتے رہے کہ جلدی نہ کرو، اُمید ہے کہ اللہ تعالیٰ کسی کو تمہارا رفیقِ سفر بنادیں۔ یہ جواب سن کر حضرت ابوبکر کو اُمید بندھ گئی کہ آنحضرت کے ساتھ میرا سفر ہو گا چنانچہ جب اللہ جل شانہ نےآنحضرت کو ہجرت کی اجازت دے دی تو آپ حضرت صدیقِ اکبرؓ کو ساتھ لے کر مدینہ منورہ کے لیے روانہ ہوگئے۔ دونوں حضرات اپنے اہل و عیال کو چھوڑ کر تشریف لے گئے اور مدینہ منورہ پہنچ کر اپنے اہل و عیال کو مکّہ معظمہ سےبلانے کا انتظام فرمایا: جسکی صورت یہ ہوئی کہ حضرت زید بن حارثہ اَور حضرت ابو رافعؓ کو دواُونٹ اور پانچ سو درہم دے کر مکّہ بھیجا تاکہ دونوں کے گھرانوں کو لے آویں۔
چنانچہ وہ دونوں مکّہ معظمہ پہنچے اور راستے سے اُن حضرات نے تین اُونٹ خرید لیے، مکّہ میں داخل ہوئے تو حضرت طلحہ بن عبیداللہ سے ملاقات ہو گئی۔ وہ اُس وقت ہجرت کا اِرادہ کر چکے تھے۔ چنانچہ یہ مبارک قافلہ مدینہ منورہ کو روانہ ہواجس میں حضرت زید بن حارثہ ،اُن کا بچہ اُسامہ اور اُن کی بیوی اُمِ ایمن اور آنحضرت
کی دو بیٹیاں حضرت فاطمہ اور حضرت اُم کلثوم اور آپ کی بیویاں حضرت عائشہ ؓحضرت سودہ  ؓاور حضرت عائشہ ؓکی والدہ حضرت اُمِ رومان اورحضرت عائشہ ؓکی بہن اسماء بنت ابی بکر اور اُن کے بھائی عبداللہ بن ابی بکر ؓاجمعین تھے۔
اِس سفر میں حضرت عائشہ ؓاور اُن کی والدہؓ دونوں ایک کجاوہ میں اُونٹ پر سوار تھیں۔ راستہ میں ایک موقع پر وہ اُونٹ بِدک گیا جس کی وجہ حضرت اُمِ رومانؓ کو بہت پریشانی ہوئی اور گھبراہٹ میں اپنی بچی عائشہ کے متعلق پکار اٹھیں   ہائے میری بیٹی ہائے میری دُلہن   لیکن اللہ تعالیٰ کی غیبی مدد یہ ہوئی کہ غیب سے آواز آئی کہ اُونٹ کی نکیل چھوڑ دو۔ حضرت
عائشہ
ؓکا بیان ہے کہ میں نے اُس کی نکیل چھوڑ دی تو وہ آرام کے ساتھ ٹھہر گیا اور اللہ نے سب کو سلامت رکھا۔
جب یہ قافلہ مدینہ منورہ پہنچا تو آنحضرت مسجد نبوی (علیٰ صاحبہِ الصلوة والسلام ) کے آس پاس اپنے اہل و عیال کےلیےحجرے بنوا رہے تھے۔ حضرت سودہ  ؓحضرت فاطمہ اور حضرت اُمِ کلثوم ؓکو اِن ہی حجروں میں ٹھہرا دیا اور حضرت عائشہ ؓاپنے ماں باپ کے پاس ٹھہر گئیں (الاستیعاب ،اَلبدایہ )۔
اِس کے چند ماہ بعد شوال میں حضرت عائشہ ؓکی رُخصتی ہوئی۔ حضرت اسماء بنت ابی بکر (حضرت عائشہ ؓکی بہن) کازمانۂ ولادت قریب تھا۔ وہ بھی اپنی ماں کے ساتھ ہجرت کر کے آئی تھیں۔ اُنہوں نے قبا میں قیام فرمایا: اور وہیں بچہ پیدا ہوا جس کانام عبداللہ رکھا گیا۔ حضرت اسماء کے شوہر حضرت زبیر تھے اِس لیے یہ بچہ عبداللہ بن زبیر کے نام سے مشہور ہوا۔ہجرت کے بعد مہاجرین میں یہ سب سے پہلا بچہ تولد ہوا۔ اِن کے تولد سے مسلمانوں کو بہت ہی زیادہ خوشی ہوئی جس کی وجہ یہ تھی کہ یہودیوں نے مشہور کر دیا تھا کہ ہم نے جادو کر دیا ہے اَب مسلمانوں کی اَولاد نہ ہو گی۔جب حضرت عبداللہ بن زبیرپیداہوئے تو یہودیوں کا دعویٰ جھوٹا ہوا۔(الاستیعاب والبدایہ )حضرت اسماء بنت ابی بکرؓ کا بیان ہے کہ جب عبداللہ کی پیدائش ہو گئی تو میں اُس کو لیکر آنحضرت کی خدمت میں حاضر ہوئی۔ آپ نے اُس کو اپنی گود میں لےلیااورایک کھجور منگا کر اپنے مبارک منہ میں چبائی پھر بچہ کے منہ میں اپنے مبارک منہ میں سے ڈال دی۔ حاصل یہ ہے کہ سب سے پہلے بچہ کے پیٹ میں آپ کا لعاب مبارک گیا اور آپ نے دُعا بھی دی اور بَارَکَ اللّٰہُ بھی فرمایا
(البدایہ )حضرت عبداللہ بن زبیر حضرت عائشہ ؓکے بھانجے تھے اُن کے نام سے حضرت عائشہ ؓکی کنیت
اُم عبداللہ آنحضرت
نے فرمائی تھی۔ (البدایہ۔ الاصابہ )

1 comment
  1. ذرا تحقیق کیجئے ۔ اماں عائشہ رضی اللہ عنہا کے نکاح اور رخشتی کی عمریں کم لکھی ہیں ۔ جہاں تک مجھے یاد پڑتا ہے 12 سال اور 15 سال ہے

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

Pak Islamic Library

Authentic Islamic Books

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Urdu Islamic Books

islamic books in urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.wordpress.com

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Contact Us: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

creating happiness everyday

an artist's blog to document her creativity, and everyday aesthetics

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

%d bloggers like this: