حضرت سلیمان علیہ السلام-1

قرآن كریم میں حضرت داؤد علیہ السلام كو سلیمان علیہ السلام جیسا باشرف بیٹا عطا فرمانے كى خبردى گئی ہے كہ جو ان كى حكومت و رسالت كو باقى و جارى ركھنے والے تھے۔ ارشاد ہوتا ہے: ہم نے داؤد علیہ السلام كو سلیمان علیہ السلام عطاكیا،كیاہى اچھا بندہ تھا كیونكہ وہ ہمیشہ دامن خدا كى طرف اور آغوش حق كى طرف لوٹتا تھا ۔( سورۂ ص آیت 30)
قرآن مجید ;موجودہ توریت كے برخلاف كہ جو سلیمان علیہ السلام كو ایك جبار،بت خانہ ساز اور عورتوں كى ہوس میں مبتلابادشاہ كے طور پر متعارف كراتى ہے۔سلیمان علیہ السلام كو خدا كا ایك عظیم پیغمبر شمار كرتا ہے،اور انہیں قدرت اوربےنظیر حكومت كے نمونہ كے طور پر پیش كرتا ہے،اور سلیمان علیہ السلام سے مربوط مباحث كے دوران بہت ہى عظیم درس انسانوں كو دیتا ہے،ان داستانوں كے ذكر كرنے كا اصل مقصد وہى ہیں ۔ خدا نے اس بزرگ پیغمبر كو بہت ہى عظیم نعمتیں عطا فرمائی تھیں ۔ بہت ہى سریع اور تیز روسوارى كہ جس كے ذریعے وہ مختصر سى مدت میں اپنے سارے ملك كى سیر كرسكتے تھے۔
مختلف صنعتوں كے لئے فراواں معدنى مواد۔ اس معدنى مواد كو استعمال كرنے كے لئے كافى فعال قوت۔ انہوں نے ان وسائل سے فائدہ اٹھاتے ہوئے بڑے بڑے عبادت خانے بنائے اور لوگوں كو عبادت كى طرف ترغیب دى ،علاوہ ازیں حكومت كى فوجوں ،كاركنوں اور كمزور لوگوں كے طبقات كى پذیرائی كے لئے وسیع و عریض پروگرام منظم كیا،كہ جسكےبرتنوں كے نمونہ سے،باقى چیزوں كا اندازہ لگایا جاسكتاہے۔
ان تمام نعمتوں كے مقابلہ میں انہیں شكر گزارى كا حكم دیا،اس مطلب پر تاكید كرتے ہوئے كہ خدا كى نعمتوں كے شكركاحق بہت ہى كم لوگ ادا كرسكتے ہے۔
اس كے بعد یہ واضح و روشن كیا كہ ایك شخص اس قدرت و عظمت كے باوجود موت كے مقابلہ میں كتنا كمزور اور ناتواں تھا،كہ وہ ایك ہى لمحہ میں ناگہانى موت كے ذریعہ دنیا سے چل بسا،اس طرح سے كہ اجل نے اسے بیٹھنے یا بستر پر لیٹنے كى مہلت بھى نہ دی،تاكہ مغرور سركشى كرنے والے یہ گمان نہ كرلیں ۔
كہ اگر وہ كسى مقام پر پہنچ جائیں اور قدرت و قوت حاصل كرلیں تو واقعى طور پر وہ توانا ہوگئے ہیں ،وہ جس كے سامنے جن اور انسان،شیطان و پرى خدمت میں لگے ہوئے تھے۔
اور زمین و آسمان جس كى جولانگاہ تھے،اور جس كى حشمت اور شان و شوكت میں جو بھى شك كرے اس كى عقل وفكرپرمرغ و ماہى قہقہہ لگائیں ،اور وہ ایك مختصر سے لمحہ میں سمندر كى موجوں پر ابھرنے والے بلبلے كى طرح محوونابودہوگیا۔
اور یہ بھى واضح و روشن كردے كہ ایك ناچیز عصا اسے ایك مدت تك كس طرح اٹھائے رہااور جن اسےكھڑےہوئےیابیٹھے ہوئے دیكھتے رہنے كى وجہ سے كیسے سرگرمى كے ساتھ اپنے كاموں میں مشغول رہے؟
اور یہ بھی(دكھادے)كہ دیمك نے انہیں كس طرح زمین پر گرایا اور ان كے ملك كے تمام رشتوں كو توڑ كے ركھ دیا۔ہاں ایك عصا ہى اس وسیع و عریض ملك كى فعال قوت كو بروئے كار لائے ہوئے تھا اور ایك چھوٹى سے دیمك نےاس كو حركت سے روك دیا۔
سلیمان علیہ السلام كا سخت امتحان
قرآن میں حضرت سلیمان علیہ السلام كى زندگى كا ایك دوسرا حصہ بیان كیا كہ اللہ نے حضرت سلیمان علیہ السلام كوآزمایا۔اس میں ایك ترك اولى پیش آیا۔اس كے بعد حضرت سلیمان علیہ السلام نے بارگاہ خداوندى كا رخ كیا اور اس ترك اولى پر توبہ كی۔( قرآن مجید میں چونكہ یہ واقعہ مختصر طور پر بیان كیا گیا ہے لہذا افسانہ طرازوں اور خیال پردازوں نے فائدہ اٹھایا اور بے بنیاد خیالى داستانیں بنا ڈالیں ۔انھوں نے اس عظیم نبى كى طرف بعض ایسى چیزیں منسوب كیں جویاتو اساس نبوت كے خلاف ہیں یا مقام عصمت كے منافى ہیں یا اصولى عقل ومنطق ہى كے برخلاف ہیں ۔یہ باتیں تمام محققین قرآن كے لئے خود ایك آزمائش ہیں ۔حالانكہ قرآن كے متن میں جو كچھ كہا گیا ہے اگر اسى پر قناعت كرلى جاتى تو ان بے ہودہ افسانوں كى گنجائش باقى نہ رہتی۔)قرآن كہتا ہے : ہم نے سلیمان علیہ السلام كا امتحان لیا اور اس كى كرسى پر ایك دھڑڈال دیا،پھر اس نے بارگاہ خداوندى كى طرف رجوع كیا اور اس كى طرف لوٹا ۔( سورۂ ص، آیت 36)( كرسی كا معنى ہے چھوٹے پاؤں والا تخت یوں معلوم ہوتا ہے كہ بادشاہوں كے پاس دوطرح كے تخت ہوتے تھے۔ایك تخت عام استعمال كے لئے ہوتا تھا جسكے پاؤں چھوٹے ہوتے تھے اور دوسرا تخت خصوصى پروگراموں كے لئے ہوتا تھا كہ جسكےپائےبلند ہوتے تھے۔پہلى قسم كے تخت كو كرسی كہا جاتا تھا اور دوسرى قسم كے تخت كو عرش كہتے تھے۔)
كلام الہى سے اجمالى طور پر معلوم ہوتا ہے كہ سلیمان علیہ السلام كى آزمائش بے جان دھڑكے ذریعے ہوئی تھى وہ ان كى آنكھوں كے سامنے ان كے تخت پر ركھ دیا گیا تھا لیكن اس سلسلے میں قرآن میں كوئی وضاحت نہیں ۔محدثین ومفسرین نے اس سلسلے میں روایات تفاسیر بیان كى ہیں ان میں سے زیادہ قابل توجہ اور واضح یہ ہے كہ:
سلیمان علیہ السلام كى آرزو تھى كہ انھیں باشرف اور شجاع اولاد نصیب ہو جو ملك كا نظام چلانے اور خاص طور پر دشمنوں كے خلاف جہاد میں ان كى مدد كرے۔حضرت سلیمان علیہ السلام كى متعدد بیویاں تھیں ۔ انھوں نے دل میں ارادہ كیا كہ میں ان سے ہم بستر ہوتا ہوں تا كہ مجھے متعدد بیٹے نصیب ہوں كہ جو میرے مقاصد میں میرى مدد كریں ۔ لیكن اس مقام پر ان سے غفلت ہوئی اور آپ علیہ السلام نے انشاء اللہ نہ كہا كہ جو انسان كے ہر حالت میں اللہ پر تكیہ كا غماز ہے ۔
لہذا اس زمانے میں ان كى بیویوں سے كوئی اولاد نہ ہوئی سوائے ایك ناقص الخلقت بچے كے ۔ وہ بے جان دھڑكےمانندتھاكہ جو لا كر ان كے تخت پر ڈال دیا گیا۔
سلیمان علیہ السلام سخت پریشان اور فكر مند ہوئے كہ انھوں نے ایك لمحے كے لئے اللہ سے غفلت كیوں كى اور كیوں اپنى طاقت پر بھروسہ كیا اس لئے انھوں نے توبہ كى اور بارگاہ الہى كى طرف رجوع كیا۔( باقى رہے جھوٹے اور قبیح افسانے كہ جن كا ذكر بعض كتب میں بڑى آب و تاب سے كیا گیا ہے۔ ظاہراً ان كى جڑ تلمود كے یہودیوں كى طرف جاتى ہے اور یہ سب اسرائیلیات اور خرافات ہیں كوئی عقل و منطق انھیں قبول نہیں كرتی۔ ان قبیح افسانوں میں كہا گیا ہے سلیمان علیہ السلام كى انگوٹھى كھو گئی تھى یا وہ كسى شیطان نے چھین لى تھى اور خود ان كى جگہ تخت پر آبیٹھا تھا وغیرہ وغیرہ۔
یہ افسانے ہر چیز سے قبل انھیں گھڑنے والوں كے انحطاط فكرى كى دلیل ہیں ۔یہى وجہ ہے كہ محققین اسلام نے جہاں كہیں ان كا نام لیا ہے ان كے بے بنیاد ہونے كو صراحت كے ساتھ بیان كیا ہے كہ نہ تو مقام نبوت اورحكومت الہى انگوٹھى سے وابستہ ہے اور نہ كبھى یہ مقام اللہ اپنے كسى نبى سے چھینتا ہے اور نہ كبھى شیطان كو نبى كى شكل میں لاتا ہے،چہ جائیكہ افسانہ طرازوں كے مطابق وہ چالیس دن تك نبى كى جگہ پر بیٹھے اور لوگوں كے درمیان حكومت و قضاوت كرے۔)
قرآن نے حضرت سلیمان علیہ السلام كى توبہ كا مسئلہ پھر تفصیل سے بیان كیا ہے۔،ارشاد ہوتا ہے: اس نےكہا:پروردگارمجھے بخش دے ۔اور مجھے ایسى حكومت عطا كر جو میرے بعد كسى كے شایاں نہ ہو كیونكہ تو ہى بہت عطا كرنے والا ہے ۔( سورۂ ص آیت 35)

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

Pak Islamic Library

Authentic Islamic Books

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Urdu Islamic Books

islamic books in urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.wordpress.com

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Contact Us: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

creating happiness everyday

an artist's blog to document her creativity, and everyday aesthetics

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

%d bloggers like this: