صفاتِ ایمان:06

قیامت

 قیامت کا دن اس دن کو کہتے ہیں جب اسرافیل علیہ السلام صور پھونکیں گے،قیامت کا آنا برحق ہے۔ اس کا ٹھیک وقت اللّٰہ تعالیٰ کے سوا کوئی نہیں جانتا اتنا معلوم ہے کہ جمعہ کا دن اور محرم کی دسویں تاریخ ہو گی۔ اس کی جو نشانیاں حضورِ انور ﷺفرمائیں ہیں،سب حق ہیں اور وہ 2قسم پر ہیں :
 1– علاماتِ صغریٰ
2– علاماتِ کبریٰ
1- علامات صغریٰ
 جو حضور انور ﷺ کے وصال مبارک سے لے کے مہدی علیہ السلام کے ظہور تک ظاہر ہوں گی،بہت زیادہ ہیں ان میں سے  کچھ مختصراً یہ ہیں:
 1– حضور انور ﷺ کا اس دارِ فانی سے پردہ فرمانا
 2– بیت المقدس کا فتح ہونا
 3– ایک عام وبا کا ہونا( یہ دو نشانیاں حضرت عمر ؓ کے زمانے میں پوری ہوئی)
 4– مال کا زیادہ ہونا( یہ حضرت عثمان ؓ کے زمانے میں ہوا)
5– ایک فتنہ جو عرب کے گھر گھر میں داخل ہو گا (یہ شہادتِ عثمان ؓ کا سبب تھا)
 6– مسلمانوں اور نصاریٰ میں صلح ہو گی،پھر نصاریٰ غدر کریں گے،(یہ علامات آئندہ ہونے والی ہے )
7– علم اٹھ جائے گا جہل بڑھ جائے گا
8– زنا اور شراب خوری کی بہت ہی کثرت ہو گی
9- عورتیں زیادہ اور مرد کم ہوں گے ( یہ غالباً حضرت امام مہدی علیہ السلام کے زمانے میں جہاد میں مردوں کے بکثرت شہیدہونے سے ہو گا)
10– جھوٹ بولنا کثرت سے ہو گا
11– بڑے بڑے کام نااہلوں کے سپرد ہوں گے،بے علم اور کم علم لوگ پیشوا بن جائیں گے،کم درجہ کے لوگ بڑی بڑی اونچی عمارتیں بنائیں گے
12– لوگ مصیبتوں کی وجہ سے موت کی آرزو کریں گے
 13– سردار لوگ مالِ غنیمت کو اپنا حصہ سمجھیں گے
14– امانت میں خیانت بڑھ جائے گی
15– زکوٰۃ دینے کو جرمانہ سمجھیں گے
 16– علم دنیا حاصل کرنے کے لئے پڑھیں گے
17– لوگ اپنے ماں باپ کی نافرمانی اور ان پر سختیاں کریں گے
 18– مرد عورت کا فرمانبردار اور ماں باپ کا نافرمان ہو گا اور دوست کو نزدیک اور باپ کو دور کرے گا
19- مسجدوں میں لوگ شور کریں گے                      
 20– فاسق لوگ قوم کے سردار ہوں گے اور رذیل لوگ قوم کے ضامن ہوں گے
21– بدی کے خوف سے شریر آدمی کی تعظیم کی جائے گی 
 22– باجے علانیہ ہوں گے،گانے بجانے اور ناچ رنگ کی زیادتی ہو جائے گی
23– امت کے پچھلے لوگ پہلے بزرگوں پر لعنت کریں گے
 24– سرخ آندھی
25– زلزلے
26– زمین میں دھنسنا
27– صورتیں بدل جانا
 28– پتھر برسنا وغیرہ دیگر علامات ظاہر ہوں گی اور اس طرح پے درپے آئیں گی،جس طرح تاگا ٹوٹ کر تسبیح کےدانےگرتےہیں۔ مختصر یہ کہ اچھے کام اٹھتے جائیں گے اور برے کاموں اور گناہوں کی کثرت ہوتی جائے گی
29- نصاریٰ تمام ملکوں پر چھا جائیں گے
 30– مسلمانوں میں بڑی ہل چل مچ جائے گی اور گھبرا کر حضرت امام مہدی علیہ السلام کی تلاش میں مدینہ منورہ میں آئیں گےاور امام مہدی علیہ السلام مکہ چلے جائیں گے۔ بعض اور علامات بھی ہوں گی مثلاً
31– درندے جانور آدمی سے کلام کریں گے
 32– کوڑے پر ڈالی ہوئی جوتی کا تسمہ کلام کرے گا اور آدمی کو اس کے گھر کے بھید بتائے گا،بلکہ خود انسان کی ران اُسےخبردے گی
 33– وقت میں برکت نہ ہو گی،سال مہینے کی مانند اور مہینہ ہفتہ کی اور ہفتہ دن کی مانند ہو گا اور دن ایسا ہو جائے گا جیسا کہ کسی چیز کو آگ لگی اور جلدی بھڑک کر ختم ہو گئی
 34– ملک عرب میں کھیتی اور باغ اور نہریں ہو جائیں گی،مال کی کثرت ہو گی
 35– نہر فرات اپنے خزانے کھول دے گی کہ وہ سونے کے پہاڑ ہوں گے    
 36– اس وقت تک 30بڑے دجال ہوں گے وہ سب نبوت کا دعویٰ کریں گے حالانکہ نبوت حضور انور ﷺپر ختم ہو چکی ہے،ان میں سے بعض گزر چکے ہیں مثلاً :
مسیلمہ کذاب،طلحہ بن خولید،اسودعنسی،سجاح عورت جو کہ بعد میں اسلام لے آئی وغیرہم اور جو باقی ہیں ضرور ہوں گےاوربھی بہت سی علامات حدیثوں میں آئی ہیں۔
 علامات کبٰریٰ
 حضرت امام مہدی ؓ کے ظہور سے نفحِ صور تک مندرجہ ذیل علامتیں ظاہر ہوں گی:
 1– حضرت امام مہدی علیہ السلام کا ظہور ہو گا۔ مہدی کے معنی ہیں ہدایت پایا ہوا۔ امام مہدی موعود یعنی جن کا علاماتِ قیامت میں ذکر ہے اور قربِ قیامت میں جن کے ظہور کا وعدہ ہے ایک خاص شخص ہے جو دجال موعود( یعنی جس دجال کاامام مہدی سے پہلے ہونے کا وعدہ ہے ) کے وقت میں ظاہر ہوں گے اور دجال کے ظاہر ہونے سے پہلے وہ نصاریٰ سے جنگ کر کے فتحیاب ہوں گے،آپ کا نام محمد والد کا نام عبداللّٰہ والدہ کا نام آمنہ ہو گا آپ حضرت امام حسن ؓ کی اولاد سے ہوں گےمدینے کے رہنے والے ہوں گے قد مائل بہ درزی،قوی الجثہ،رنگ سفید سرخی مائل چہرہ کشادہ،ناک باریک و بلند زبان میں قدرے لکنت،جب کلام کرنے میں تنگ ہوں گے تب زانو پر ہاتھ ماریں گے،آپ کا علم لدنی ہو گا،چالیس برس کی عمر میں ظاہرہوں گے اس کے بعد سات یا آٹھ برس تک زندہ رہیں گے جب مدینہ منورہ سے مکہ مکرمہ آئیں گے لوگ ان کو پہچان کران سے بیت کریں گے اور اپنا بادشاہ بنائیں گے اس وقت غیب سے یہ آواز آئے گی
 ھَذا خَلِیفَہّ اللّٰہِ المَھدِی فَاستَمِعُو وَ اطِیعُوا   یہ اللّٰہ تعالیٰ کا خلیفہ مہدی ہے اس کی بات سنو اور اطاعت کرو  
2– اس سال ماہ رمضان میں تیرہویں تاریخ کو چاند اور ستائسویں تاریخ کوسورج گرہن ہو گا۔
 3– امام مہدی ؓ کے زمانے میں اسلام خوب پھیلے گا امام مہدی سنت نبوی پر عمل کریں گے عرب کی فوج ان کی مدد کو جمع ہو گی کعبہ کے دروازہ کے آگے جو خزانہ مدفون ہے جس کو تاج الکعبہ کہتے ہیں نکالے گے اور مسلمانوں میں تقسیم فرمائیں گے،دمشق کے قریب نصاریٰ کے لشکر جرار کے ساتھ جنگ ہو گی مسلمانوں کے تین فریق ہوں گے ایک وہ جو نصاریٰ کے خوف سےبھاگ جائیں گے ان کی توبہ کبھی قبول نہ ہو گی اور وہ حالت کفر میں مر جائیں گے ایک فریق شہید ہو جائے گا اور افضل شہدا کا مرتبہ پائے گا تیسرا فریق فتح۔پائے گا اور ہمیشہ فتنے سے امن میں رہے گا۔
 4– دجال موعود ایک خاص شخص ہے یہ قوم یہود سے ہو گا اور اس کا لقب مسیح ہو گا داہنی آنکھ اندھی ہو گی اور اس میں انگورکے دانے کی مانند ناخونہ ہو گا اس کے بال حبشیوں کے بالوں کی مانند نہایت پیچیدہ ہوں گے،ایک بڑا گدھا اس کی سواری کے لئے ہو گا اور اس کے ماتھے کے عین بیچ میں کافر اس طرح لکھا ہو گا  ک ف ر  جس کو ہر ذی شعور پڑھ لے گا،اول وہ ملک شام و عراق کے درمیان ظاہر ہو کر نبوت کا دعویٰ کرے گا پھر اسفہان میں آئے گا اور ستر ہزار یہودی اس کے تابی ہوں گے وہ خدائی کا دعویٰ کرے گا اس کے ساتھ آگ ہو گی جس کو وہ دوزخ کہے گا اور ایک باغ ہو گا جس کا نام وہ بہشت رکھےگادراصل اس کی دوزخ جنت کی تاثیر رکھتی ہو گی اور اس کی جنت دوزخ کے اثر والی ہو گی،زمین میں دائیں بائیں فسادڈالتاپھرے گا اور بادل کی طرح پھیل جائے گا،اس سے پہلے سخت قحط ہو گا وہ عجیب عجیب کرشمے دکھائے گا،جو استدراج کےحکم میں ہوں گے،مسلمانوں کو ان کی تسبیح و تہلیل روٹی اور پانی کا کام دے گی پھر مکہ کی طرف آئے گا،لیکن فرشتوں کی حفاظت کے سبب مکہ معظمہ میں داخل نہ ہو سکے گا،پھر مدینہ منورہ کا ارادہ کرے گا اور اُحد پہاڑ کے پاس ڈیرہ لگائے گا مدینہ منورہ کے اس وقت سات دروازے ہوں گے ہر دروازے پر دو محافظ فرشتے ہوں گے اس لئے دجال اندر نہ جا سکے گا۔ پھردمشق کی طرف روانہ ہو گا جہاں امام مہدی ہوں گے وہ امام مہدی سے مقابلہ کرے گا،امام مہدی ؓ لشکر درست کر کے جنگ کے لئے تیار ہوں۔گے
 5– اتنے میں عصر کا وقت دمشق کی جامع مسجد کے مشرقی سفید منارہ پر زرد لباس پہنے ہوئے دو فرشتوں کے بازوؤں پر ہاتھ دہرے ہوئے حضرت عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے اتریں گے،جب سر نیچا کریں گے تو پسینے سے قطرے ٹپکیں گے،جب سراٹھائیں گے تو موتیوں کے دانوں کی مانند قطرے گریں گے پھر امام مہدی ؓ سے ملاقات کریں گے اور ایکدوسرے کوامامت کے لئے کہیں گے غالباً پہلے امام مہدی ؓ امام ہو کر نمازپڑھائیں گے تاکہ تکریم امت ہو،پھر حضرت عیسیٰ علیہ السلام امامت فرمائیں گے،کیونکہ آپ نبی ہیں حضرت عیسی علیہ السلام دجال کے قتل کے لئے آمادہ ہوں گے آپ کے دم کی یہ تاثیر ہو گی کہ جس کافر کو وہ ہوا لگ جائے گی وہ مر جائے گا اور جہاں تک ان کی نظر جائے گی وہ ہوا بھی وہاں تک جائے گی،آپ دجال کاتعاقب کریں گے باب لُد( ملک شام کا پہاڑ یا گاؤں ) کے پاس اسے گھیر لیں گے اور نیزے سے قتل کر کے اس کا خون لوگوں کو دکھائیں گے اگر اس کے قتل میں حضرت عیسیٰ جلدی نہ کریں تو وہ کافر نمک کی طرح خود بخود پگھل جائےپھرلشکرِاسلام دجال کے لشکر کو کہ اکثر یہودی ہوں گے بکثرت قتل کرے گا،حضرت عیسیٰ علیہ السلام حکم دیں گے کہ خنزیر قتل کئے جائیں اور صلیب کہ جس کو نصاریٰ پوجتے ہیں توڑ دی جائے اور کسی کافر سے جزیہ نہ لیا جائے بلکہ وہ اسلام لائےپس اس وقت تمام دنیا میں دین اسلام پھیل جائے گا کفر مٹ جائے گا خوب انصاف راج ہو گاجور وظلم دنیاسےدورہوجائےگا۔ امام مہدی ؓ کی خلافت سات یا آٹھ یا نو برس ہو گی ( باخلافِ روایات) پھر آپ دنیا سے تشریف لےجائیں گےخضرت عیسی علیہ اسلام اور مسلمان ان کے۔جنازے کی نماز پڑھ کر دفن کریں گے۔
 6– اس کے بعد تمام انتظام حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے اختیار میں ہو گا اور دنیا اچھی حالت پر ہو گی پھر یکایک وحی الہی سےحضرت عیسی علیہ السلام لوگوں کو کوہ طور کی طرف لے جائیں گے اور قوم یاجوج ماجوج کا خروج ہو گا جو یافث بن نوح کی اولاد میں سے ہیں،ذوالقرنین بادشاہ نے ان کے راستے کو جو دو پہاڑوں کے درہ میں تھا مستحکم بند کر دیا تھا،اخیر زمانہ میں اسوقت وہ دیوار ٹوٹ جائے گی اور یہ غارت گر قوم پھیل جائے گی،کوئی ان سے مقابلہ نہ کر سکے گا آخرکار آسمانی بلاسےخودبخودمرجائیں گے پھر زمین میں خیر برکت ظاہر ہو گی لوگوں کو مال کی کچھ پرواہ نہ ہو گی ایک سجدہ کرنا دنیا و مافیا سے اچھا جانیں گے یہ خیروبرکت سات برس تک رہے گی،اس عرصہ میں خضرت عیسی علیہ السلام نکاح بھی کریں گے اور ان کی اولاد بھی ہو گی پھردنیا سے انتقال فرمائیں گے اور آنحضور ﷺ کے روزہ مبارک میں دفن ہوں گے۔ اور قیامت میں وہیں سے اٹھیں گے
 7– حضرت عیسیٰ علیہ السلام ایک شخص کو خلیفہ مقرر فرمائیں گے وہ اچھی طرح عدل کے ساتھ حکومت کرے گا لیکن شروفسادوکفر و الحاد پھیل جائے گا اسی طرح دو تین شخص یکے بعد دیگرے حاکم ہوں گے،لیکن کفر و الحاد بڑھتا جائے گا پھر اس زمانے میں ایک مکان مشرق میں اور ایک مکان مغرب میں دھنس جائے گا جہاں منکرین تقدیر رہتے ہوں گے۔
 8– انہی دنوں آسمان سے ایک دھواں نمودار ہو گا کہاس سے مومنین کو زکام سا معلوم ہو گا اور کافروں کو نہایت تکلیف ہو گی
 9- انہی دنوں ماہ ذوالحجہ میں قربانی (10 ذی الحجہ)کے دن کے بعد کی رات بہت دراز ہو گی یہاں تک کہ بچےچلااٹھےگےاورمسافر تنگ دل ہوں جائیں گے اور مویشی چرا گاہ میں جانے کے لئے بہت شور کریں گے لیکن صبح نہ ہو گی یہاں تک کہ لوگ ڈر کر کے روئیں چلائیں گے اور توبہ توبہ پکاریں گے اس رات کی درازی تین یا چار رات کےبرابرہوجائےگی۔
 10– پھر قرصِ آفتاب تھوڑے نور کے ساتھ جیسا کہ گہن کے وقت ہوتا ہے مغرب کی جانب سے طلوع کرےگااوراتنابلندہوکر جتنا کہ چاشت کے وقت ہوتا ہے پھر غروب ہو جائے گا اور حسب عادت مشرق سے طلوع کرےگااسکےبعد کسی کی توبہ قبول نہ ہو گی۔
 11– اس کے دوسرے روز مکہ کا پہاڑ صفا (نام) زلزلہ آ کر شک ہو جائے گا اور ایک جانور جس کی عجیب صورت ہو گی باہرآئے گا اور لوگوں سے کلام کرے گا اس کو دابتہ الارض کہتے ہیں،اس کے ایک ہاتھ میں عصائے موسیٰ اور دوسرے میں مُہر سلیمانی ہو گی،عصا موسیٰ سے ہر مسلمان کی پیشانی پر ایک نورانی خط بنائے گا اور مہر سے ہر کافر کی پیشانی پر ایک سخت سیاہ دھبہ لگائے گا،اس وقت تمام مسلمان و کافر کھلم کھلا پہچانے جائیں گے اور یہ علامت کبھی نہ بدلے گی،کافر پھر ہرگز ایمان نہ لائے گا اور مسلمان ہمیشہ ایمان پر رہے گا،اس کے سو برس بعد قیامت آئے گی
 12– پس دابتہ الارض کے نکلنے کے کچھ عرصہ بعد یعنی جب قیامت میں چالیس برس رہ جائیں گے تو شام کی طرف سے ایک خوشبودار ٹھنڈی ہوا( ہوائے سرد)چلے گی جو بغلوں کے نیچے سے گزرے گی جس کے اثر سے کوئی اہل ایمان اور اہل خیرزمیں پر نہ رہے گا سب مر جائیں گے حتیٰ کہ اگر کوئی مومن پہاڑ کے غار میں چھپا ہو گا تو یہ ہوا پہاڑ کے غار میں پہنچ کراس کو مارے گی پھر سب کافر ہی کافر رہ جائیں گے
 13– پھر حبشہ کے کفار کا غلبہ ہو گا وہ خانہ کعبہ کو گرا دیں گے اور اس کے نیچے سے خزانے نکالیں گے ظلم وفسادپھیلےگاجانوروں کی طرح لوگ کوچہ و بازار میں ماں بہن سے جماع کریں گے،قران کاغذوں سے اٹھ جائے گا شہر اجڑ جائیں گے،قحط و وبا کا ظہور ہو گا اس کے بعد ملک شام میں کچھ ارزانی ہو گی اور کچھ امن ہو گا دوسری جگہ کے لوگ وہاں آئیں گےجس سے وہاں لوگوں کی کثرت ہو گی۔
 14– کچھ مدت کے بعد جنوب کی طرف سے ایک آگ نمودار ہو گی اور لوگوں کو گھیر کر ملک شام کی طرف لائے گی جہاں مرنے کے بعد حشر ہو گا۔
 15– اس کے بعد پانچ برس تک پھر لوگوں کو خوب عیش و آرام میسر ہو گا۔ لوگ شیطان کے بہکانے سے بتوں کی عبادت کریں گے،ان کو روزی کی فراخی حاصل ہو گی اور زمین پر کوئی اللّٰہ اللّٰہ کہنے والا نہ باقی رہے گا تب صور پھونکا جائے گااورقائم ہو جائے گی۔ لوگ اس وقت عیش و آرام میں ہوں گے اور مختلف کاموں میں مصروف ہوں گے کہ یکایک جمعہ کے روز جبکہ محرم کا عشرہ ہو گا علیٰ الصباح آواز آئے گی لوگ حیران ہوں گے کہ یہ کیا ہے وہ آواز آہستہ آہستہ بلند ہوتی جائے گی یہاں تک کہ کڑک اور رعد کے برابر ہو گی تب لوگ مرنے شروع ہوں گے۔ صور ایک چیز بگل کی مانند ہے حضرت اسرافیل علیہ السلام اس کو منھ سے بجائیں گے اس کی آواز کی شدت سے ہر چیز فنا ہو جائے گی جاندار مر جائیں گے درخت اور پہاڑ روئی کے گالوں کی طرح اڑتے پھریں گے،آسمان کے تارے چاند سورج ٹوٹ کر گر پڑیں گے،آسمان پھٹ کرٹکڑےٹکڑےہوجائےگازمین معدوم ہو جائے گی۔ بعض علماء نے کہا ہے کہ فنائے کلی سے یہ 8 چیزیں مستثنیٰ ہیں ان کو فنا نہ ہو گی
 1– عرش
 2– کرسی
3– لوح
4– قلم
5– بہشت
6– دوزخ
7– صور
 8– ارواح
 لیکن ارواح پر ایک قسم کی بیہوشی طاری ہو گی اور بعض علماء فرماتے ہیں سوائے اللّٰہ تعالیٰ کے ہر چیز فنا ہو جائے گی اوران8مذکورہ چیزوں میں بھی ایک دم بھر کے لئے فنا آئے گی،اس وقت اللّٰہ تعالیٰ فرمائے گا :
لِمَنِ المُلکُ الیَوم  آج کس کا ملک ہے ؟
جب کوئی جواب نہ دے گا تو اللّٰہ تعالیٰ آپ ہی فرمائے گا :
  ِللّٰہِ الَواحِدِ  القَھَّارِ  ملک اللّٰہ واحد و قہار ہی کا ہے۔  
یہ پہلے نفخے کا بیان تھا۔ چالیس سال کے بعد پھر صور پھونکا جائے گا اس سے ہر چیز دوبارہ ہو جائے گی،اس کی کیفیت ولبعث بعد الموت میں درج ہے۔

Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | Dars e Nizami Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

MAHA S. KAMAL

INTERNATIONAL RELATIONS | POLITICS| POLICY | WRITING

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

%d bloggers like this: