صفاتِ ایمان:05

عذاب قبر

 ہر جاندار کو موت کا مزا چکھنا ہے اور مرنے کے بعد ہر انسان کواس کے عملوں کی جزا یا سزا ملے گی اسکے2درجےہیں:
1-مرنے کے بعد سے قیامت تک اس کو عالم برزخ کہتے ہیں
اور
2-قیامت سے لے کر ابدالاباد تک ہے اس کو حشر و نشر کہتے ہیں۔اس میں پوری پوری جزا و سزا ہو گی۔
سب کفار اور بعض گنہگار مومنوں کو قبر کا عذاب ہوتا ہے۔
 بعض گناہگار مومنون سے قبر کا عذاب بھی معاف ہو جاتا ہے یا وہ گناہ کے مطابق عذاب پا کر نجات پا جاتے ہیں۔صالح مومن مرد و عورت قبر میں عیش و آرام سے رہتے ہیں۔وارثوں اور دیگر مسلمانوں کی خیر خیرات کرنے قران مجید و نوافل وغیرہ پڑھنے اور اس کا ایصال ثواب و دعا کرنے سے بھی میت کے عذاب قبر میں تخفیف ہو جاتی ہے مگر کافر کو مرنے کے بعد کوئی خیرات یا دعا وغیرہ نفع نہیں دیتی خواہ کوئی مومن ہی ایسا کرے۔ اسی طرح اگر کوئی کافرکسی کافر یا مومن مردےکےلئےدعاکرے یا صدقہ دے تو ہرگز اس کو نفع نہ دے گا۔ ثواب پہچانے کے لئے کسی خاص چیز یا کسی خاص وقت یاخاص طریقہ کی پابندی شرع شریف میں نہیں ہے۔ایسی پابندی سے بچنا چاہئے بلکہ جس وقت جو کچھ میسر ہو وہ مالی یا بدنی ثواب کا کام ادا کر کے اس کا ثواب بخش دیا جائے۔ایصال ثواب کا کام رسم کی پابندی،دکھاوے اور نام و شہرت کے لئے نہ کرے اور بلا ضرورت ادھار اور قرض لے کر رسوم کی پابندی کرنا اور بھی گناہ ہے کسی ایسی مصلحت سے وقت وغیرہ کی پابندی کی جائے جو شرعاً جائز ہو اور اس کو شرع کی طرف سے لازمی نہ سمجھا جائے تو کوئی حرج نہیں مگر آج کل جاہلوں کی رسمی پابندی کے خوف سے بچنا ضروری ہے ورنہ وہ دلیل بنائیں گے۔
 قبر میں مُردے سے سوال و جواب کی تفصیل یہ ہے کہ جب مُردے کو اس کے خویش و اقارب قبر میں رکھ کر واپس جاتےہیں تو وہ ان کی جوتیوں کی آواز سنتا ہے اس وقت اس کے پاس دو فرشتے آتے ہیں ایک کو منکراوردوسرےکونکیرکہتےہیں۔
منکر و نکیر مُردے کو بیٹھا کر پوچھتے ہیں :  مَن رَّبُّکَ (تیرا رب کون ہے ؟)
مومن بندہ جواب دیتا ہے :  رَبِّیَ اللّٰہ (میرا رب اللّٰہ تعالیٰ ہے )
منکر و نکیر پوچھتے ہیں : مَن نَّبِیُّکَ ( تیرا نبی کون ہے )  
مومن بندہ جواب دیتا ہے : نَبِیِّی مُحَمَّد ( میرے نبی محمد (ﷺ) ہیں)
منکر و نکیر پوچھتے ہیں : مَا دِینُکَ ( تیرا دین کیا ہے )
مومن بندہ جواب دیتا ہے :  دِینِیَ الاِ سلاَمُ ( میرا دین اسلام ہے )
بعض روایات میں دوسرا سوال اس طرح ہے :
منکر و نکیر پوچھتے ہیں :  مَا کُنتَ تَقُوُلُ
فِی ھٰذَا الرُّجُلِ
( تو اس آدمی (محمد ﷺ)کے بارے میں کیا کہتا تھا)
مومن بندہ جواب دیتا ہے : ھُوَ رَسُولُ اللّٰہ ﷺ (وہ اللّٰہ کے رسول (ﷺ) ہیں )
وہ فرشتے کہیں گے تجھے کس نے بتایا وہ کہے گا میں نے اللّٰہ کی کتابیں پڑھیں،اس پر ایمان لایا اور تصدیق کی۔ پس اسکےلئےقبرمیں جنت کی طرف ایک دروازہ کھول دیا جائے گا۔ جس سے جنت کی ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا اور خوشبو اس کے پاس آتی
رہے گی اور اس کی قبر کشادہ اور نورانی کر دی جائے گی۔
اگر وہ بندہ کافر یا منافق ہوتا ہے تو سوالوں کے جواب میں کہتا ہے ھَاہ ھَا لَا اَدرِی ( افسوس میں کچھ نہیں جانتا)
وہ فرشتے اس کو لوہے کے گرزوں ( ہتھوڑوں ) سے ایسے مارتے ہیں کہ سوائے جن و انس کے تمام مخلوق اس کی چیخیں سنتی ہےاور قبر اُس کو اِس قدر دباتی ہے کہ اس کی پسلیاں اِدھر کی اُدھر اور اُدھر کی اِدھر نکل جاتی ہیں پھر دوزخ کی کھڑکی اس پرکھول دی جاتی ہے۔ اور وہ حشر تک اس عذاب میں مبتلا رہتا ہے،البتہ بعض مومنوں کو بقدر گناہ عذاب پورا ہو کر اس سےپہلےبھی اس عذاب سے رہائی ہو جاتی ہے اور کبھی محض اللّٰہ پاک کے فضل و کرم سے اور کبھی دنیا کے لوگوں کی دعااورصدقہ و خیرات وغیرہ کے ایصال ثواب سے بھی عذاب سے رہائی حاصل ہو جاتی ہے۔ جمعہ کے روزکی برکت سے بھی ہر گناہگار مومن کو اس روز عذاب سے رہائی ہو جاتی ہے۔ ضغطہ قبر ( قبر کی تنگی و گھبراہٹ) نیک بندوں کو بھی ہوتاہےجوکسی گناہ کے سبب یا کسی نعمت کا شکر ادا نہ کرنے کے سبب ذرا سی دیر کے لئے ہوتا ہے پھر اّسی وقت دورہوجاتاہے،بعض کو اللّٰہ تعالیٰ کی رحمت سے نہیں بھی ہوتا۔ مرنے کے بعد ہر روز صبح اور شام کے وقت ہرمُردےکواسکاٹھکانا دکھا دیا جاتا ہے جنتی کو جنت دکھا کر خوشخبری دیتے ہیں اور دوزخی کو دوزخ دکھا کر اس کی حسرت بڑھاتےہیں
 جو لوگ قبر میں دفن نہیں کئے جاتے بلکہ جلا دئے جاتے ہیں یا پانی میں ڈوب کر مر جاتے یا جانور کھا جاتے ہیں وغیرہ،انکوبھی عذاب قبر ہوتا ہے،قبر سے مراد وہ گڑھا نہیں جو زمین کھود کر میت کو اس میں دفن کیا جاتا ہے۔ بلکہ وہ مقام ہے جہاں مرنےکے بعد برزخ میں روح کو رکھا جاتا ہے۔ نیکوں کی روح کے مقام کو عالمِ بالا یعنی علیین کہتے ہیں اور بروں کے مقام کوعالمِ پست یعنی سجین کہتے ہیں اور وہ عذاب سانپ بچھو لوہے کی سلاخیں وغیرہ سے جیسی اس عالم کے مناسب ہوں روح کودیاجاتا ہے اور جسم کے ساتھ روح کا ایک ادنیٰ سا تعلق باقی رہنے کی وجہ سے زمینی گڑھے کو بھی قبر کہہ دیتے ہیں اور بعض اوقات اس قبر میں رکھے ہوئے جسم پر بھی اس عذاب و ثواب کے اثرات مرتب ہو کر اہلِ دنیا کی عبرت کےلئےظاہرہوتےرہتے ہیں۔
 علماء نے مسلمان کے گناہ معاف ہونے کے 10 سبب لکھے ہیں :
1– توبہ
2– استغفار
3– نیک اعمال
 4– دنیا میں کسی بلا میں گرفتار ہونا
 5– ضغطہ قبر
 6– مسلمانوں کی دعا کی برکت
7– مسلمانوں کا صدقہ جو اس کی طرف سے دیں
 8– قیامت کی سختی
9- نبی ﷺ کی شفاعت
 10– محض رحمت الٰہی                  
 جو لوگ قبر کے عذاب اور منکر نکیر کے سوال و جواب سے محفوظ رہیں گے یہ ہیں:
 1– غازی یا شہید
2– جمعہ کی رات یا جمعہ کے دن مرنے والا                   
 تناسخ (آواگون) مسلمانوں کے عقیدے کے بالکل خلاف ہے یہ ہندوؤں اور بعض کافر فلسفیوں کا عقیدہ ہے جو غلط ہےانبیاءعلیہم السلام اس دنیا سے پردہ فرمانے کے بعد اپنی قبروں میں اپنے اجسام کے ساتھ زندہ ہیں۔ اور اس زندگی کی کیفیت اللّٰہ تعالیٰ ہی بہتر جانتا ہے۔ شہدا بھی زندہ ہیں،لیکن انبیاء علیہم السلام کی زندگی سب سے قوی تر ہے،صدیقین و دیگر اولیاء اللّٰہ و حفاظ بھی زندہ ہیں۔ اولیاء اللّٰہ اور شہدا کی روحیں سبز پرندوں کے جسم میں داخل کر دی جاتی ہیں وہ بہشت میں پھرتی اور اس کی نہروں کا پانی پیتی ہیں۔ ان کی ارواح کو اجازت ہوتی ہے کہ جہاں چاہیں پھریں،کاملین کی ارواح کبھی کبھی اللّٰہ تعالیٰ کی اجازت سے اس جسمانی دنیا میں ظاہر ہو کر تصرف بھی کرتی ہیں اور اپنے دوستوں کی مدد کرتی اور دشمنوں کو سزا دیتی ہیں۔

Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: