حضرت خضر علیہ السلام:1

ابى بن كعب نے ابن عباس كى وساطت سے پیغمبر اكرمﷺ كى ایك حدیث اس طرح نقل كى ہے:
”ایك دن موسى علیہ السلام بنى اسرائیل سے خطاب كررہے تھے۔ كسى نے آپ علیہ السلام  سے پوچھا روئے زمین پر سب سے زیادہ علم كون ركھتا ہے۔تو موسى علیہ السلام نے كہا مجھے اپنے آپ سے بڑھ كر كسى كے عالم ہونے كا علم نہیں ۔ اس وقت موسى علیہ السلام كو وحى ہوئی كہ ہمارا ایك بندہ مجمع البحرین میں  ہے كہ جو تجھ سے زیادہ عالم ہے۔ اس قت موسى علیہ السلام نے درخواست كى كہ میں  اس عالم كى زیارت كرنا چاہتا ہوں ۔اس پر اللہ نے انہیں  ان سے ملاقات كى راہ  بتائی”۔
یہ درحقیقت حضرت موسى علیہ السلام كو تنبیہ تھى كہ اپنے تمام تر علم و فضل كے باوجود اپنے آپ كو افضل ترین نہ سمجھیں ۔( لیكن یہاں  یہ سوال سامنے آتا ہے كہ كیا ایك اولوالعزم صاحب رسالت و شریعت شخص كو اپنے زمانے كا سب سےبڑاعالم نہیں  ہونا چاہئے؟ اس سوال كے جواب میں  ہم كہیں  گے كہ اپنى ماموریت كى قلمرو میں  نظام تشریع میں  اسےسب سے بڑاعالم ہونا چاہیئےور حضرت موسى علیہ السلام اسى طرح تھے لیكن ان كى ماموریت كى قلمرو ان كے عالم دوست كى قلمرو سے الگ تھی۔ ان كے عالم دوست كى ماموریت كا تعلق عالم بشریت سے نہ تھا۔ دوسرے لفظوں  میں  وہ عالم ایسے اسرار سے آگاہ تھے كہ جو دعوت نبوت كى بنیاد نہ تھے۔ ایک روایت میں  صراحت كے ساتھ بتایا گیا ہے كہ حضرت موسى  علیہ السلام  حضرت خضر علیہ السلام  سے زیادہ عالم تھے یعنى علم شریعت میں ۔ شاید اس سوال كا جواب نہ پانے كى وجہ سے اور نسیان سے مربوط سوال كا جواب نہ پانے كے سبب بعض نے ان آیات میں  جن موسى علیہ السلام كاذكر ہے اسے موسى بن عمران تسلیم كرنے سے انكار كردیا ہے۔
ایك نكتہ یہ بھی معلوم ہوتا ہے كہ ان دونوں  بزرگوں  كا دائرہ كار اور قلمرو ایك دوسرے سے مختلف تھى اور ہر ایك دوسرے سے اپنے كام میں  زیادہ عالم تھا۔.)
حضرت موسى علیہ السلام اور خضر علیہ السلام كہ جو اس زمانے كے بڑے عالم تھے ان كا واقعہ بھى عجیب ہے۔یہ واقعہ نشاندہى كرتا ہے كہ حضرت موسى علیہ السلام جیسے اولو العزم پیغمبر كہ جو اپنے ماحول كے آگاہ ترین اور عالم ترین فردتھے،بعض پہلوئوں  سے ان كا علم بھى محدود تھا لہذا وہ استاد كى تلاش میں  نكلے تاكہ اس سے درس لیں ،استاد نے بھى ایسے درس دیئے كہ جن میں  سے ہر ایك دوسرے سے عجیب تر ہے۔ اس داستان میں  بہت سے اہم نكات پوشید ہ ہیں ۔
حضرت موسى ، جناب خضر كى تلاش میں
حضرت موسى علیہ السلام كو كسى نہ آیت اہم چیزى كى تلاش تھی۔وہ اس كى جستجو میں  دربدر پھر رہے تھے۔وہ عزم بالجزم اور پختہ ارادے سے اسے ڈھونڈ رہے تھے۔وہ ارادہ كئے ہوئے تھے كہ جب تك اپنا مقصود نہ پالیں  چین سے نہیں  بیٹھیں  گے۔
حضرت موسى علیہ السلام جس كى تلاش پر مامور تھے اس كا آپ علیہ السلام  كى زندگى پر بہت گہرا اثر ہوا اور اس نے آپ علیہ السلام  كى زندگى كا نیا باب كھول دیا۔جى ہاں وہ ایك مرد عالم و دانشمند كى جستجو میں  تھے۔ایسا عالم كہ جو حضرت موسى علیہ السلام كى آنكھوں  كے سامنے سے بھى حجاب ہٹا سكتا تھا اور انہیں  نئے حقائق سے روشناس كرواسكتا تھا اور انكےلئےعلوم و دانش كے تازہ باب كھول سكتا تھا۔

ہم اس سلسلے میں  جلد پڑھیں  گے كہ اس عالم بزرگ كى جگہ معلوم كرنے كے لئے حضرت موسى علیہ السلام كے پاس ایك نشانى تھى اور وہ اس نشانى كے مطابق ہى چل رہے تھے۔
قرآن كہتا ہے :وہ وقت یاد كرو جب موسى نے اپنے دوست اور ساتھى جوان سے كہاكہ میں  تو كوشش جارى ركھوں  گاجب تك”مجمع البحرین”تك نہ پہنچ جائوں ،اگر چہ مجھے یہ سفر لمبى مدت تك جارى ركھنا پڑے”۔( سورہ كہف آیت 60)
مجمع البحرین كا مطلب ہے دو دریائوں  كا سنگم۔اس سلسلے میں  مفسرین میں  اختلاف ہے كہ ”بحرین”سے یہاں  كون سے دودریا ہیں ۔اس سلسلے میں  تین مشہور نظریئےیں :
1۔خلیج عقبہ اور خلیج سویز كے ملنے كى جگہ۔ہم جانتے ہیں  كہ بحیرہ احمر دو حصوں  میں تقسیم ہوجاتا ہے۔ایك حصہ شمال مشرق كى طرف بڑھتا رہتا ہے اور دوسرا شمال مغرب كى طرف پہلے حصے كو خلیج عقبہ كہتے ہیں  اور دوسرے كو خلیج سویز اور یہ دونوں  خلیجیں  جنوب میں  پہنچ كر آپس میں  مل جاتى ہیں  اور پھر بحیرہ احمر اپنا سفر جارى ركھتا ہے۔
2۔اس سے بحر ہند اور بحیرہ احمر كے ملنے كى طرف اشارہ ہے كہ جو باب المندب پر جاملتے ہیں ۔
3۔یہ بحیرہ روم اور بحر اطلس كے سنگم كى طرف اشارہ ہے كہ جو شہر طنجہ كے پاس جبل الطارق كا تنگ دہانہ ہے۔
تیسرى تفسیر تو بہت ہى بعید نظر آتى ہے كیونكہ حضرت موسى علیہ السلام جہاں  رہتے تھے وہاں  سے جبل الطارق كا فاصلہ اتنا زیادہ ہے كہ اس زمانے میں  حضرت موسى علیہ السلام اگر عام راستے سے وہاں  جاتے تو كئی ماہ لگ جاتے۔
دوسرى تفسیر میں  جس مقام كى نشاندہى كى گئی ہے اس كا فاصلہ اگر چہ نسبتاًكم بنتا ہے لیكن اپنى حد تك وہ بھى زیادہ ہے كیونكہ شام سے جنوبى یمن میں  فاصلہ بھى بہت زیادہ ہے۔
پہلا احتمال زیادہ صحیح معلوم ہوتاہے كیونكہ حضرت موسى علیہ السلام جہاں  رہتے تھے وہاں  سے یعنى شام سے خلیج عقبہ تك كوئی زیادہ فاصلہ نہیں  ہے۔ویسے بھى قرآنى آیات سے معلوم ہوتا ہے كہ حضرت موسى علیہ السلام نے كوئی زیادہ سفر طے نہیں  كیا تھا اگر چہ مقصد تك پہنچنے كے لئے بہت زیادہ سفركے لئے بھى تیار تھے۔
Advertisements
2 comments
  1. مجھے تو لگا تھا کہ ۔ ۔ ۔ آپ رمضان کی مناسبت سے کوئی تحریر شائع کریں گیں ۔ ۔ ۔؟؟؟

    رمضان مبارک

    • لیجئے تحریر حاضر ہے
      رمضان کے حوالے سے گھر میں کچھ تبدیلیاں کرنے کی وجہ سے اور
      پھربجلی کی بےتحاشا بندش کے باعث تحریر پوسٹ نہ کوسکی تھی
      امید ہے تسلی ہو چکی ہوگی

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | Dars e Nizami Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

MAHA S. KAMAL

INTERNATIONAL RELATIONS | POLITICS| POLICY | WRITING

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

%d bloggers like this: