حضرت ایوب علیہ السلام-2

قران میں اگر چہ حضرت ایوب علیہ السلام كے مال و دولت كے بارے میں بات نہیں كى گئی لیكن مو جودقرائن سے معلوم
ہوتا ہے كہ اللہ نے پھر آپ كو مال ودولت بھى فراواں تر عطا فرمایا۔
اب صرف ایك مشكل ایوب علیہ السلام كے لئے باقى تھى ،وہ قسم جو انھوں نے اپنى بیوى كے بارے میں كھائی تھى اوروہ یہ تھى كہ انھوں نے ان سے كوئی خلاف مرضى كام دیكھا تھا لہذا انھوں نے اس بیمارى كى حالت میں قسم كھائی كہ جس وقت ان میں طاقت پیدا ہو گئی تو وہ اسے ایك سویا اس سے كچھ كم كوڑے ماریں گے،لیكن صحت یابى كے بعد وہ چاہتے تھے۔
كہ اس كى خدمات اور وفاداریوں كا لحاظ ركھتے ہوئے اسے معاف كردیں لیكن قسم اور خدا كے نام كا مسئلہ درمیان میں تھا۔
خدانے یہ مشكل بھى ان كے لئے حل كر دى ،جیسا كہ قران كہتا ہے كہ ان سے فرمایاگیا:
”گندم كى شاخوں (یا اسى قسم كى كسى چیز ) كى ایك مٹھى بھر لو اور اس كے ساتھ مارو اور اپنى قسم نہ توڑو ”۔( سورہ ص آیت 44 )
حضرت ایوب علیہ السلام كى بیوى كا نام ایك رو آیت كے مطابق ”لیا” بنت یعقوب تھا ،اس بارے میں كہ اس سے كون سى غلطى ہوئی تھى مفسرین كے درمیان بحث ہے ۔
ابن عباس سے نقل ہوا ہے كہ شیطان یا (كوئی شیطان صفت )ایك طبیب كى صورت میں ایوب علیہ السلام كى بیوى كےپاس ایا اس نے كہا :میں تیرے شوہر كا علاج كرتا ہوں صرف اس شرط پر كہ جس وقت وہ ٹھیك ہو جائے تو وہ مجھ سے یہ كہہ دے كہ صرف میں نے اسے شفا یاب كیا ہے،اس كے علاوہ میں اور كوئی اجرت نہیں چاہتا ۔ان كى بیوى نےجوان كى مسلسل بیمارى كى وجہ سے سخت پریشان تھى اس شرط كو قبول كر لیا اور حضرت ایوب علیہ السلام كے سامنے یہ تجویز پیش كی،حضرت ایوب علیہ السلام جو شیطان كے جال كو سمجھتے تھے ،بہت ناراض ہوئے اور قسم كھائی كہ وہ اپنى بیوى كو سزا دیں گے۔
بعض نے كہا ہے كہ جناب ایوب علیہ السلام نے اسے كسى كام كے لئے بھیجا تھا تو اس نے دیر كردی، حضرت ایوب علیہ السلام چونكہ بیمارى سے تكلیف میں تھے ،بہت پریشان ہوئے اور اس طرح كى قسم كھائی۔ بہر حال اگر وہ ایك طرف سےاس قسم كى سزا كى مستحق تھى تو دوسرى طرف اس طویل بیمارى میں اس كى وفاداری، خدمت اور تیماردارى اس قسم كےعفو و در گذر كا استحقاق بھى ركھتى تھى ۔
یہ ٹھیك ہے كہ گندم كى شاخوں كے ایك دستہ یا خوشہ خرما كى لكڑیوں سے مارنا ان كى قسم كا واقعى مصداق نہیں تھا لیكن خدا كے نام كے احترام كى حفاظت اور قانون شكنى پھیلنے سے روكنے كے لئے انھوں نے یہ كام كیا اور یہ بات صرف اس صورت میں ہے كہ كوئی مستحق عفو و در گذر ہو،اور انسان چاہے كہ عفو و درگذر كے باجود قانون كے ظاہر كو بھى محفوظ ركھے ورنہ ایسے مواقع پر جہاں استحقاق عفو و بخشش نہ ہو وہاں ہر گز اس كام كى اجازت نہیں ہے۔قران میں اس واقعہ كےاخرى جملے میں جو اس داستان كى ابتداء و انتہاكا نچوڑ ہے ،فرمایا گیا ہے:”ہم نے اسے صابر و شكیبا پایا ،ایوب كتنا اچھا بندہ تھا جو ہمارى طر ف بہت زیادہ باز گشت كرنے والا تھا”۔( سورہ ص آیت 44)
یہ بات كہے بغیر ہى ظاہر ہے كہ ان كا خدا كى بارگاہ میں دعاكرنا اور شیطان كو وسوسوں اور درد ،تكلیف اور بیمارى كےدروہونے كا تقاضا كرنا،مقام صبر و شكیبائی كے منافى نہیں اور وہ بھى سات سال اور ایك رو آیت كے مطابق اٹھارہ سال تك بیمارى اور فقر و نادارى كے ساتھ نبھا نے اور شاكر رہنے كے بعد۔
قابل توجہ بات یہ ہے كہ اس جملے میں حضرت ایوب علیہ السلام كى تین اہم صفات كے ساتھ تو صیف كى گئی ہے كہ جوجس كسى میں بھى پائی جائیں وہ ایك انسان كا مل ہوتا ہے ۔
1۔مقام عبودیت2۔صبر و استقامت3۔پے در پے خدا كى طرف باز گشت۔
اس عظیم پیغمبر كا پاك چہرہ ،جو صبر و شكیبائی كا مظہر ہے ،یہاں تك كہ صبر ایوب علیہ السلام سب كے لئے ضرب المثل ہوگیا ہے ،قران مجید میں ہم نے دیكھ لیا ہے كہ خدا نے كس طرح سے اس داستان كى ابتدااور انتہا میں ان كى تعریف كى ہے۔
لیكن افسوس كے ساتھ كہنا پڑتا ہے كہ اس عظیم پیغمبر كى سر گزشت بھى جاہلوں یا دانا دشمنوں كى دستبرد سے محفوظ نہ رہى اور ایسے ایسے خرافات ان پر باندھے گئے جن سے ان كى مقدس و پاك شخصیت منزہ ہے ،ان میں سے ایك یہ ہے كہ بیمارى كے وقت حضرت ایوب علیہ السلام كے بدن میں كیڑے پڑگئے تھے اور ان میں بدبو پیدا ہو گئی تھى كہ بستى
والوں نے انھیں آبادى سے باہر نكال دیا ۔
بلا شك و شبہ اس قسم كى رو آیت جعلى اور من گھڑت ہے ،چاہے وہ حدیث كى كتابوں كے اندر ہى كیوں نہ ذكر ہوئی ہوں ،كیونكہ پیغمبر وں كى رسالت كا تقاضا یہ ہے كہ لوگ ہر وقت اور ہر زمانے میں میل و رغبت كے ساتھ ان سے مل سكیں اور جو بات لوگوں كے تنفر و بے زارى اور افراد كے ان سے دور رہنے كا موجب بنے ،چاہے وہ تنفر بیماریاں ہوں یاعیوب جسمانى یا اخلاقى خشونت و سختى ،ان میں نہیں ہوں گی،كیونكہ یہ چیزیں ان كے فلسفہ رسالت سے تضاد ركھتى ہیں ۔
لیكن توریت میں ایك مفصل قصہ ”ایوب”كے بارے میں نظر آتا ہے جو ”مزامیر داو د ”سے پہلے موجود ہے ،یہ كتاب 42فصل پر مشتمل ہے اور ہر فصل میں تفصیلى بحث موجود ہے ،بعض فصول میں تو انتہائی تكلیف دہ مطالب نظر اتے ہیں ،ان میں سے تیسرى فصل میں ہے كہ : ایوب علیہ السلام نے شك آیت كے لئے زبان كھولى اور بہت زیادہ شكوہ كیا،جب كہ قران نے ان كى صبر وشكیبائی كى تعریف كى ہے ۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

My Blog

Just another WordPress.com site

%d bloggers like this: