اوّل مسلمین، رفیق غار و مزار، جانشین پیغمبر ﷺ،خلیفہ النبی بلافصل،امیر المومنین حضرت سیدنا ابو بکرصدیقؓ


نامِ نامی ،اسم گرامی
آپ کا نام عبداﷲ، ابوبکر کنیت، عتیق، صدیق لقب ہے۔
شجرۂ نسب
ابوبکرؓ کا نسب ساتویں پشت میں حضرت کلاب میں جاکر سرکار دوعالمکے نسب نامہ سے مل جاتا ہےجو کچھ یوں ہے:
ابوبکر بن ابو قحافہ عثمان بن عامر بن عمرو بن کعب بن سعید بن تیم بن مرہ بن کعب بن لوئی بن غالب بن فہر بن مالک بن نضر بن کنانہ بن خزیمہ بن مدرکہ بن الیاس بن مضر بن
نذاربن معد بن عدنان۔
آپ کے والد ماجد کی کنیت ابوقحافہ، نام عثمان تھا جبکہ والدہ ماجدہ کی کنیت امِ الخیر، نام سلمیٰ ہے اور حضرت سلمیٰ ابو قحافہ عثمان ؓ کی چچا زاد تھیں۔
صدیق وعتیق لقب کی وجہ
عتیق کے معنی حسن و جمال و آزادی کے ہیں چونکہ آپ حسین و جمیل تھے۔ اس لئے آپ کا لقب عتیق پڑگیا۔ اس کی وجہ سے کہ آپ بری عادتوں سے عاری تھے اس لئے عتیق کہلائے یا اس کے معنی شریف کے ہیں چونکہ آپ میں شرافت عالیہ پائی جاتی تھیں۔ اس لئے عتیق کہلائے کہ ایک بار آپ بارگاہ رسالت میں حاضر ہوئےتو سرکار دوعالم نے فرمایا :انت عتیق من النار۔
صدیق صدق سے نکلا ہے جس کے معنی سچائی کے ہیں چونکہ آپ ہمیشہ سچ بولتے تھے۔ اس لئے آپ کو صدیق کے لقب سے یاد کیا جاتا ہے یا اس وجہ سے کہ معراج شریف کی سب سے پہلے آپ نے تصدیق فرمائی۔ اس وقت سے صدیق کہلائے۔
آپ کی اولاد و ازواج
آپ ؓ کی 4ازواج تھیں:
قتیلہ بنت سعدؓ 
ان سے حضرت عبداللہ ؓ اور حضرت اسماء ؓ پیدا ہوئیں، حضرت اسماءکو ذات النطاقین کا لقب ملا۔انہوں نے بہت تکلیف سے زندگی گزاری۔
ان کا عقد حضرت زبیر بن عوام
ؓسے ہوا۔ ان کے صاحبزادے عبداﷲ ؓہیں جو مہاجرین کی مدینہ شریف آمد کے بعد اول المولد المہاجرین ہیں اورصحابی ہیں۔
زینب امِ رومانؓ
ان سےعبد الرحمٰن ؓاور ام المومنین حضرت عائشہ ؓ پیدا ہوئیں۔ عبدالرحمن ؓسب سے بڑے صاحبزادے ہیں۔ جنگ بدر میں قریش مکہ کی جانب سے لڑنے آئے تھے۔ بعد میں اسلام لائے۔ آپ ؓنے  اپنے والد حضرت ابوبکر ؓ سے کہا کہ آپ دوران جنگ کئی بار میرے زد میں آئے لیکن میں نے نظرانداز کیا۔ حضرت ابوبکر ؓ کاغیرت ایمانی دیکھیں! آپ ؓنے فرمایا کہ اگر تو میری زد میں ایک بار بھی آتا تو میں نہ چھوڑتا۔
عبدالرحمن ؓکا 53ھ میں وصال ہوا۔ حضرت عبداﷲ ؓبن ابی بکر ؓغزوہ طائف میں شریک ہوئے اور زخمی ہوگئے اور اسی میں 11ھ کو وصال ہوگیا۔ دو صاحبزادوں سےآپ کا نسب چلا اور حضرت عبداﷲ ؓسے نہ چلا۔ زینب ؓکا وصال 6ھ میں ہوا۔
اسماء بن عمیسؓ
سابقہ اہلیہ جعفر طیار ؓبرادر حضرت علی  بعد شہادت حضرت جعفر ؓسے 8ھ میں نکاح فرمایا۔ ان سے حضرت محمّد ؓ پیدا ہوئے۔
حبیبہ بن خارجہ بن زید بن ابی زہیرہ الخزرجیؓ
ان سے امِ کلثوم ؓ پیدا ہوئیں۔ آپ کے وصال کے وقت حبیبہ بنت خارجہ حمل سے تھیں۔
شرفِ صحابیت
حضرت ابوبکرؓ ان برگزیدہ ہستیوں میں سے ہیں جن کی چار پشتوں کو صحابیت کا شرف حاصل ہوا ہے۔ حضرت ابوبکران کے والد ماجد حضرت عثمان، عبدالرحمنبن
ابوبکر
اور ان کے صاحبزادے۔
حضرت ابوبکرؓکے والد ماجد فتح مکہ کے بعد ایمان لائے اور آپ کے وصال کے بعد بھی زندہ رہے۔ حضرت عمر ؓ کے دور خلافت میں 14ھ میں وصال فرمایا۔
پیدائش
واقعہ فیل کے دو سال چار ماہ بعد 573ھ میں پیدا ہوئے۔ یعنی رسول مقبول کی ولادت کے دو سال دو ماہ بعد آپ کی ولادت مکہ شریف میں ہوئی۔ وہیں پرورش پائی اور زندگی کے پچاس سال وہیں گزارے۔ سوائے تجارت کے مکہ شریف سے کبھی باہر نہ نکلے۔
حلیہ مبارک
سیدنا ابوبکرؓ کا رنگ گورا، بلند پیشانی آنکھیں اندر دھنسی ہوئیں، بدر چھریرا رخسار اندر کو دبے ہوئے، آپ آنکھیں نیچی رکھا کرتے، آپ  ؓکی داڑھی گھنی اورسفید،مہندی لگایا کرتے۔
مرتبہ
آپ ؓزمانہ جاہلیت میں بھی معزز اور قریش کے سرداروں میں تھے۔ آپ ؓبہت بڑے تاجر تھے اور معاشرے میں ذکی، فہم شعار تھے۔ صدق و عفت میں شہرت تھی۔ قبل اعلان نبوت آپ ؓسرکار دوعالم دوست و بہی خواہ تھے۔ ورقہ بن نوافل اور دیگر راہبوں سے سرکار دوعالم میں علامت نبوت کا علم حضرت ابوبکر ؓ کوپہلےسے ہی ہوگیا تھا۔ اعلان نبوت کے منتظر تھے کہ بعد اعلان فورا ایمان لائیں۔ چنانچہ ایسا ہی کیا جوں ہی نبی معبوث نے اعلان کیا۔ آگے بڑھتے ہوئے اسلام قبول کیا۔ کسی کی مخالفت کو خاطر میں نہ لائے اور ہر طرح کی تکالیف کو جھیلا ، برداشت کیا۔
کفارِقریش کی ایذا رسانی
کفار مسلمان غلاموں کو تو طرح طرح کی ایذا دیا ہی کرتے تھے، مگر چونکہ مسلمانوں کی تعداد بڑھتی رہی اور بہت سے حضرت صدیق ؓ کی تحریک سے بھی اسلام لائےتھے تو قریش نے حضرت صدیق ؓکو بھی تکالیف دینا شروع کردیں تھیں۔
ہجرتِ حبشہ
حضرت ابوبکرؓ نے بھی ہجرت کا ارادہ کیا اورآپ ؓیمن کے راستے سے حبشہ کی جانب روانہ ہوئے۔ برک الغماد پہنچے ہی تھے یہ مکہ سے یمن کی جانب پانچ دن کی مسافت پر ہے کہ ابن دغنہ یعنی حارث بن زید قارہ قبیلہ کے سردار سے ملاقات ہوئی۔ اس نے کہا … اے ابوبکر! کہاں؟ آپ نے جواب دیا کہ میری قوم مجھے رہنے نہیں دیتی۔ میں چاہتا ہوں کہ وطن چھوڑ کر کہیں الگ عبادت کرتا رہوں۔ ابن دغنہ نے کہا، یہ نہیں ہوسکتا۔ تم جیسا نہ نکلے، نہ نکالا جاسکتا ہے، اس کے اصرار پر واپس آئے۔
ابن دغنہ نے سرداران قریش سے بات کی اور آپ دوبارہ مکہ میں رہنے لگے۔ عبادت الٰہی، تلاوت قرآن پاک کیا کرتے، بالآخر اعلانیہ عبادت و تلاوت کی وجہ سے پھرتکالیف شروع ہوگئیں۔
ہجرتِ مدینہ
ابن دغنہ نے آپ کوپناہ دی تھی۔ قریش کی شکایات پر اسے واپس لے لیا۔ اب آپؓ پر دوبارہ ظلم و ستم شروع ہوگیا تو آپ ؓنے رسول اﷲ سے مدینہ شریف کی ہجرت چاہی۔ آپ ؓنے فرمایا اے ابوبکر جلدی نہ کیجئے، صبر کیجئے۔ کیا عجب کہ اﷲ تعالیٰ کسی اور بندہ کو آپ کے ساتھ کردے اور وہ آپ کے سفر کا ساتھی ہوجائے۔ آپ نے یہ جواب سن کر سفر کا ارادہ ترک کردیا اور مکہ میں رہ کر تکالیف برداشت کرتے رہے۔ یہاں تک کہ سرکار مدینہ کو ہجرت کی اجازت من جانب اﷲ ملی توآپ کے ہمراہی سفر کیا۔ حضرت ابوبکر نے پہلے ہی دو اونٹنیاں تیار کررکھی تھیں۔ ایک اونٹنی سرکار کو پیش کی لیکن سرکار عالم نے اس کی قیمت دی، سفر شروع کردیا۔ غار ثور میں تین دن قیام کیا پھر مدینہ کی طرف روانہ ہوئے۔ پور اراستہ آنحضور کی خدمت کرتے رہے حتی کہ مدینہ پہنچ گئے۔ جہاں رسول اﷲ کا لوگوں اور مدینہ شریف کی بچیوں نے ان اشعار کے ساتھ استقبال کیا۔
طلع البدر علینا
من ثنیات الوداع
وجب الشکر علینا
مادعا ﷲ داع
ایھا المبعوث فینا
جئت بالامر لمطاع
نحن جوار من بنی نجار
یاحبذا محمّد من جار
مدینہ شریف پہنچ کر رسول اﷲ کی خدمت میں رہے اور غزوۂ بدر اسلام کی پہلی جنگ سے لے کر آخری جنگ غزوۂ تبوک تک جنگوں میں شریک رہے۔ 9ھ میں رسول اﷲ نے آپ ؓکو امیر حج بنایا اور خطبہ حج آپ ؓہی نے پڑھا۔
ھجری 11 پیر 8 جون 632ء کو جہان فانی سے رسول خدا نے پردہ فرمایا۔ اب مہاجر و انصار میں جان نشینی کے مسئلہ پر کچھ اضطراب تھا۔ حضرت عمر ؓ نے حضرت ابوبکر ؓ کا ہاتھ پکڑا اور بیعت کرلی اور تمام مہاجرین اور انصار نے بھی بیعت کرلی۔ حضرت علی ؓ نے بروایت حاشیہ بخاری شریف تین روز کے بعد بیت کرلی۔ حضرت ابوبکرؓ نے نہایت دانش مندی سے الجھن کو سدھارا اور خلیفہ بننے کے بعد طرح طرح کے پیش آمدہ مسائل کو نہایت حسن و خوبی سے نمٹایا اور جو فتنے اٹھے، اس کی  سرکوبی کی۔ جمع قرآن کی ابتدائ، بمشورہ خلیفہ دوئم آپ ہی نے کی۔ آپ ؓ13ھ جمادی الاخر میں دنیا فانی سے رخصت ہوئے۔ حضرت ابوبکرؓ نے رحلت سے قبل اکابرین صحابہ کے مشورے کے بعد حضرت عمر ؓ کو اپنا جانشین مقرر کردیا۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

My Blog

Just another WordPress.com site

%d bloggers like this: