خَتمِ نبَّوت پر حملے:-2

خَتمِ نبَّوت کے ایک معنی اور مفہوم تو اہل حق کے لئے تھے کہ نبوت اللہ تعالیٰ کی رحمت تھی جو اب حضرت محمدا پر مکمل ہوگئی اور اب خَتمِ نبَّوت کے ذریعےمزیدآسمانی ہدایت اور وحی کا سلسلہ بند کردیاگیا۔ قرآن مجید جیسی کتاب اب موجود ہے جو قیامت تک رہے گی۔ مزید برآںلاتزال طائفۃ من امتی قائمۃ بامراللہ،لایضرہم من خذلہم او خالفہم حتی یاتی امراللہ و ہم ظاہرون علی الناس’’میری امت کا ایک گروہ ہمیشہ اللہ کے حکم پر قائم رہے گا جو کوئی ان کو نقصان پہنچانا چاہے یا بگاڑنا چاہے وہ ایسا نہیں کرسکے گایہاں تک کہ اللہ کا حکم آن پہنچے اور وہ لوگوں پر غالب رہیں۔‘‘(صحیح مسلم، کتاب الامارۃ)کی خوش خبری بھی سنادی گئی کہ اہل حق کا گروہ قیامت تک حق پر قائم رہے گا چاہے حالات کیسے ہی نامساعد کیوں نہ ہوجائیں۔
اور یہ اعلان بھی رحمت خداوندی ہی کا نشان ہے کہ:اِنَّ اللّٰہَ یَبْعَثُ لِھٰذِہِ الْاُمَّۃِ عَلٰی رَأْسِ کُلِّ مِأَۃِ سَنَۃً مِنْ یُّجَدِّدُ لَھَا دِیْنَہَااللہ تعالیٰ اس امت کےلیےہرصدی میں ایساشخص بھیجتارہے گا جو اس کے لیے اس کے دین کی تجدید کرے‘(ابو داؤد عن ابی ہریرۃ ص)
مجددین کے ذریعے اللہ تعالیٰ اس اُمت کے ایک بڑے حصے کی وقفے وقفے سے اصلاح فرماتا رہے گا راہِ حق اور ہدایت کا راستہ دوبارہ ہر صدی کے بعد واضح اور نمایاں ہوتا رہے گا تاآنکہ قیامت واقع ہوجائے۔
*
اہل ایمان کے لئے خَتمِ نبَّوت کے اوّلاً یہ معنی تھے کہ انسانیت کو پہلے قدم بہ قدم ہدایت کی ضرورت تھی اور مسلسل نبی آتے رہے اب انسانیت مجموعی طور پر ’بلوغ‘ کوپہنچ گئی ہے اور ایک بالغ ہوشمند انسان کی طرح اُصولی ہدایت (قرآن مجید) اور اس کی عملی شرح سنت رسول ا جو آپ کے صحابہ ث کے عمل میں جذب ہوگئی تھی اور انہوں نے حرزجان بھی بنا لی تھی (احادیث کے جمع کرنے کا کام تو بہت بعد میں ہوا مگر سنت رسول اکی روشنی کے عملی نمونے تو خلافت راشدہ اوراسکےبعدکےزمانے میں ہروقت سینکڑوں ہزاروں موجود تھے اور عوام الناس کی نگاہوں کے سامنے تھے جنہیں دیکھ کر وہ عبادات کرتے تھے اور انہیں عملی نمونوں سے ہی انہیں عمل میں آگے بڑھنے کی مہمیز ملتی تھی) کی موجودگی میں مزید کسی ہدایت کی ضرورت نہیں۔* اور ثانیاًیہ معنی تھے کہ اب دین کی دعوت و اشاعت اُمت مسلمہ کے ذمے ہے اور قیامت تک آپ اکی اُمت ہی یہ فریضہ سرانجام دیتی رہے گی۔
صہیونیّت
یہودی حضرت موسیٰ کے پیروکار اور ان کی اُمت کہلاتے ہیں، عیسائی حضرت عیسیٰ تک سب پیغمبروں کو مانتے ہیں اور آسمانی مذہب کے پیروکار ہیں یہ دونوں مذاہب عملی کوتاہیوں کے باوجود آج بھی اللہ کو مانتے ہیں آخرت کو مانتے ہیں وحی کو مانتے ہیں آسمانی کتابوں کو مانتے ہیں۔ آسمانی شریعت کا بھی اقرار کرتے ہیں۔
مسلمان حضرت آدم سے لے کر حضرت محمد ﷺ تک تمام پیغمبروں کو برحق سمجھتے ہیں اور آخرت کو مانتے ہیں سابقہ آسمانی کتابوں کو بھی صحیح مانتے ہیں اور قرآن مجید کو آخری کتاب سمجھتے ہیں قرآن مجید میں ہدایت بھی ہے شریعت بھی ہے۔
یہودی اور عیسائی تاریخی طور پر اہل کتاب کہلاتے ہیں اور بنی اسرائیل کے نام سے بھی پہچانے جاتے ہیں اس لئے کہ حضرت ابراہیم کے دوبیٹے تھے حضرت اسماعیل بڑے تھے انہیں حضرت ابراہیم نے مکہ میں آباد کیا تھا جب کہ حضرت اسحاق چھوٹے تھے انہیں حضرت ابراہیم نے فلسطین میں آباد کیا تھا حضرت ابراہیم کو اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں موحّدتوحید کا ماننے والا فرمایا ہے اور یہ کہ وہ مشرکوں میں سے نہیں تھا۔ اللہ تعالیٰ نے انہیں اپنی زندگی میں جوانی سے لے کر بڑھاپے تک کئی امتحانوں میں سے گزارا کہ آیا وہ واقعی ایک اللہ کا ماننے والا ہے اور اسی اللہ کا حکم بھی مانتا ہے یا نہیں۔ حضرت ابراہیم تمام امتحانوں میں بدرجۂ احسن کامیاب ہوئےاورخود ممتحن یعنی اللہ تعالیٰ نے ان کی عالی ہمتی، بلند حوصلہ اور استقامت کی تعریف بھی فرمائی اور یہ بھی فرمایا کہ اپنے بیٹے کو اللہ تعالیٰ کے لئے خود ’ذبح کردینا‘بہت بڑا امتحان تھا جس خواب کو ابراہیم نے سچا کر دکھایا۔
ان امتحانوں سے سرخرو ہوکر نکلنے پر اللہ تعالیٰ نے انہیں کئی انعامات سے نوازا۔ان انعامات میں سے اہم انعام کعبۃاللہ کی تعمیر تھی جس سے آپں ’’معمار حرم‘‘ کےلقب
سے مشہور ہوئے۔جبکہ عظمت کے اعتبار سے بلند مرتبہ انعام یہ تھا کہ اب آئندہ ’’نبوت اورکتاب‘‘ آپ کی اولاد میں مختص رہے گی۔
آپؑ کی اولاد جو حضرت اسحاق سے چلی اس میں اگلے دوہزار سالوں میں حضرت عیسیٰ ں تک ہزاروں انبیاء کرام علیہم السلام تشریف لائے جبکہ حضرت اسماعیل کی اولادمیں 2500سال میں صرف حضرت محمد ﷺ تشریف لائے اور آپ ﷺپر نبوت ختم ہوگئی اور رسالت بھی۔
اہل کتاب اور بنی اسرائیل کے بگڑے ہوئے ایک گروہ نے حضرت موسیٰ کی حیات طیبہ میں ہی صہیونیت کی شکل اختیار کر لی تھی جو پھیلتی رہی اور پھلتی پھولتی رہی یہاں تک کہ حضرت محمد ﷺکے زمانے میں وہ فتنہ ’’جوان‘‘ ہو کر سامنے آگیا۔
صہیونیت کے جرائم میں خدابیزاری، خدا دشمنی، وحی دشمنی اور انبیاء دشمنی شامل ہیں اس پس منظر میں صہیونیت کی نفسیات کا تجزیہ کریں (جیسا کہ ہم پہلے درج کرچکےہیں) تو ایک ہی وجہ سامنے آتی ہے کہ یہ گروہ’’من مانی‘‘ کرنا چاہتا تھا اور اپنا مزاج ایسا بنا لیا تھا کہ اپنی مرضی کے خلاف کوئی حکم یا دباؤ یا مشورہ چاہے اللہ ہی کی طرف سے کیوں نہ ہو وہ قبول نہیں ہے۔
صہیونیت کی یہ سوچ تاریخ انسانی کا المیہ ہے اور مذاہب کی تاریخ کا سیاہ ترین باب کہ وہی لوگ جو انبیاء کرام علیہم السلام کی اولاد تھے اور اپنے آپ کو اللہ کےچہیتےکہتے تھے اپنے اصلی چہرے کے اعتبار سے خدا،وحی اور انبیاء کرام علیہم السلام کے بدترین دشمن نکلے۔
انبیاء کرام علیہم السلام اسی طرح آسمانی بادشاہ خالق کائنات اللہ تعالیٰ کی بادشاہت کے سرکاری اہل کار اور ذمہ دار شخصیات ہوتی تھیں اُن کے کام میں رُکاوٹ کارسرکارمیں مداخلت قرار پاتی تھی چنانچہ انبیاء کرام علیہم السلام کے مخالفین اور ان کا راستہ روکنے والے آسمانی ہدایت کے مطابق سنگین نوعیت کے مجرم ہیں۔ جبکہ انبیاء کرام علیہم السلام کا قتل یقیناًسب سے بڑا جرم ہے جو انسان سے سرزد ہو سکتا ہے اور جب کوئی شخص نفس پرستی کرتے ہوئے آسمانی ہدایت سے منہ موڑتا ہے توشیطان اس سے اسی طرح کے سنگین جرائم کا ارتکاب کراتا ہے کہ عام حق پرست لوگ سوچ بھی نہیں سکتے۔
اللہ تعالیٰ نے انسان کے اندر اخلاقی حس ودیعت فرمائی ہے اور بعض اوقات برے سے برے انسان کے اندر بھی یہ حس بیدار ہوجاتی ہے اور اسے غلطی کا احساس دلاتی ہے مگر گمراہی اور ابلیس پرستی کے اگلے مراحل میں جبکہانسان ابلیس کا معتمد ساتھی اور فدائی بن جائے یہ کسک توبہ کی بجائے جرم میں اضافے کے لئے ہی مہمیزکاکام دیتی ہے۔ چنانچہ قرآن پاک میں ارشاد ہےلَقَدْ اَخَذْنَا مِیْثَاقَ بَنِیْ اِسْرَآءِ یْلَ وَ اَرْسَلْنَا اِلَیْہِمْ رُسُلاً کُلَّمَا جَآءَ ہُمْ رَسُوْلٌ بِمَا لاَتَہْوٰی اَنْفُسُہُمْ فَرِیْقًاکَذَّبُوْا وَ فَرِیْقًا یَّقْتُلُوْنَO وَحَسِبُوْٓا اَلاَّ تَکُوْنَ فِتْنَۃٌ فَعَمُوْا وَ صَمُّوْا ثُمَّ تَابَ اللّٰہُ عَلَیْہِمْ ثُمَّ عَمُوْا وَ صَمُّوْا کَثِیْرًا مِّنْہُمْ وَ اللّٰہُ بَصِیْرٌ بِمَا
یَعْمَلُوْنَ
ہم نے بنی اسرئیل سے عہد بھی لیا اور ان کی طرف پیغمبر بھی بھیجے (لیکن) جب کوئی پیغمبر ان کے پاس ایسی باتیں لے کر آتا جن کو ان کے دل نہیں چاہتےتھے تو وہ (انبیاء کی) ایک جماعت کو تو جھٹلادیتے اور ایک جماعت کو قتل کردیتے تھے۔ اور یہ خیال کرتے تھے کہ (اس سے ان پر) کوئی آفت نہیں آنے کی،تووہ اندھے اور بہرے ہوگئے پھر اللہ تعالیٰ نے ان پر مہربانی فرمائی (لیکن) پھر ان میں سے بہت سے اندھے اور بہرے ہوگئے اور اللہ ان کے سب کاموں کو دیکھ رہا ہے۔
بنی اسرائیل کے بگڑے ہوئے یہ لوگ اتنے جری ہوگئے کہ قتل انبیاء جیسا جرم عام ہوگیا اور اس پر مستزاد یہ کہ احساس جرم بھی ختم ہوگیا۔
انبیاء کرام علیہم السلام (جو اللہ تعالیٰ کے فرستادہ ہوتے تھے) کو قتل کرنے کی ایسی رسم چل نکلی تو عام انسانوں میں سے راہِ حق کے مسافروں کا کیا حال ہوگا جوبھی ذراسر اُٹھا کر چلنے اور حق گوئی و بے باکی کا مظاہرہ کرنے کا حوصلہ کر بیٹھیں یقیناًوہ بھی تہ تیغ کر دیے جاتے تھے۔ چنانچہ ارشاد بارتعالیٰ ہے:اِنَّ الَّذِیْنَ یَکْفُرُوْنَ بِاٰیٰتِ اللّٰہِ وَ یَقْتُلُوْنَ النَّبِیِّیْنَ بِغَیْرِ حَقٍّ وَّ یَقْتُلُوْنَ الَّذِیْنَ یَأْمُرُوْنَ بِالْقِسْطِ مِنَ النَّاسِ فَبَشِّرْہُمْ بِعَذَابٍ اَلِیْمٍ Oاُولٰٓءِکَ الَّذِیْنَ حَبِطَتْ اَعْمَالُہُمْ فِی الدُّنْیَا وَ الْاٰخِرَۃِ وَ مَا لَہُمْ مِّنْ نّٰصِرِیْنَجو لوگ اللہ کی آیتوں کو نہیں مانتے اور انبیاء کو ناحق قتل کرتے رہے ہیں اور جو انصاف کا حکم دیتے ہیں انہیں بھی مارڈالتے ہیں، ان کو دکھ دینے والے عذاب کی خوشخبری سنا دو۔ یہ ایسے لوگ ہیں جن کے اعمال دنیا اور آخرت دونوں میں برباد ہیں اور ان کا کوئی مدد گار نہیں (ہوگا)
جھوٹے مدعیانِ نبوت اور صہیونی ایجنڈا
تاریخ گواہ ہے کہ گزشتہ چودہ صدیوں میں جتنے بھی جھوٹے مدعیان نبوت پیدا ہوئے ہیں ان کے دل میں ہمیشہ صہیونیت کے لئے نرم گوشہ رہا ہے۔ صہیونیت نے ہی اپنے مذموم اور ابلیسی مقاصد کے حصول کے لئے ان کی سرپرستی کی ہے اور اپنے مقاصد کے لئے استعمال کیا ہے ان جھوٹے لوگوں کی تعلیمات، کردار، زندگی ہی اس طرز کی تھی جو ایک صہیونی ذہن کا آدمی چاہتا ہے اُن کی تعلیمات بالآخر سیکولر تھیں، ظاہری لبادہ صرف مسلمانوں کو دھوکہ دینے کے لئے مذہب کا تھا کہ لوگوں کواپنی طرف کھینچا جاسکے اور جو شخص ان کے قریب آجائے وہ درپردہ مراعات اور بے حیائی و بے راہ روی دیکھ کر کبھی واپس جانے ہی نہ پائے۔
گزشتہ چودہ صدیوں میں صہیونیت نے اسلام کے خلاف جو سازشیں کی ہیں ان میں سب سے نمایاں سازش جھوٹے مدعیانِ نبوت کو کھڑا کرناہے۔ ابلیس کے فرستادہ اورمنصوبہ بندی سے بنائے گئے ان جھوٹے مدعیانِ نبوت کے ذریعے پیغمبر اسلام، قرآن ،وحی، آسمانی ہدایت اور سنت رسول اکی اہانت اور بے وقعتی کے لئے جو کام کئے گئے وہ ایک طویل تاریخ رکھتے ہیں اور اہل حق علماء نے اس کو ہمیشہ طشت ازبام کیا ہے۔ عروج کے دور میں تو اسلام کے خلاف اس پروپیگنڈے کا منہ توڑ جواب دیا جاتا رہا مگر دورِ زوال میں اہل حق علماء کی شبانہ روز کاوشوں کے باوجود صہیونیت اپنے مقاصد میں کامیابی کے مراحل طے کرتی نظر آرہی ہے۔
Advertisements
1 comment
  1. Hasan said:

    Deobandioon kii bhi class lain;

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

My Blog

Just another WordPress.com site

%d bloggers like this: