مکّہ مُکرّمہ-5

مولد نبی ﷺ
مسجد الحرام سے چند قدموں کے فاصلے پر وہ مکان مبارک موجود ہے جہاں کائنات کی سب سے معزز ہستی سرکار دوعالم سیدنا محمد ﷺ کی ولادت باسعادت ہوئی۔ حج یا عمرے کی فرضیت اداکرنے کے بعد اہل ایمان کے دل میں یہی خواہش پیدا ہوتی ہے کہ وہ سب سے پہلے اس بابرکت مکان کی زیارت کر کے اپنی آنکھوں کو ٹھنڈا کریں جہاں ہادی برحق کی مبارک پیدائش ہوئی۔
رسول اﷲ ﷺ کی ولادت مکہ کے محلے شیعب عامر میں ہوئی جو سوق اللیل (یعنی رات کا بازار) سے متصل ہے۔ اگر زائرین باب العمرہ سے باہر نکلیں ( باب العمرو مسجد الحرام کا وہ خارجی دروازہ ہے جو جبل مروا جہاں سعی کا ساتواں چکر ختم ہوتا ہے موجود ہے) اور اس دروازے کو اپنی پشت پر رکھتے ہوئے سفید ٹائلوں سے مزین ہے خوبصورت فرش پر آگے کی جانب بڑھیں انہیں بائیں ہاتھ پر ایک بازار ملے گا جسے ’’ سوق اللیل‘‘ کہتے ہیں۔ اس بازار میں دیگر دوکانوں کےساتھ جابجا حجام کی دوکانیں موجود ہیں جہاں زائرین سعی کی تکمیل کے بعد سر کے بال منڈواتے نظر آتے ہیں۔ عربی میں سوق با زار کو اور لیل رات کو کہتے ہیں۔گو کہ آج کا مکہ مکرمہ تو پوری رات جاگتا ہے اور حرم پاک کے چاروں طرف واقع محلوں میں موجود بازار چوبیس گھنٹے کھلے رہتے ہیں تا ہم رسول اللہ ﷺ کے زمانے میں شعیب عامر سے متصل بازار رات میں لگتا تھا ۔ لہٰذا اس کا نام سوق اللیل پڑ گیا اور آج تک اسے اسی نام سے یاد کیا جاتا ہے۔باب العمروہ سے باہر نکل کر زائرین باب العمروہ کو اپنی پشت پر رکھتے ہوئے سفید ٹائلوں سے مزین فرش پر چند قدم آگے کی جانب بڑھیں تو جہاں اس فرش کی حدود ختم ہو گی وہاں قدرےنیچےکی جانب سڑک کے کنارے سفید رنگ کا ایک سادہ مگر نہایت پر نور مکان نظر آئے گا جس پر ایک سبز رنگ کا بورڈ آویزاں ہے جس پر مکتہ المکرّمہ لکھا ہے۔یہی وہ بابرکت اورمقدس مکان ہے جہاں رسول اللہ ﷺ کی پیدائش مبارکہ ہوئی اس مکان کی ایک واضح نشانی یہ بھی ہے کہ اس سے متصل ٹیکسی کا ایک چھوٹاسا اسٹینڈ ہے اور اس سڑک پر صرف یہی ایک مکان بنا ہوا ہے۔اللہ تعالیٰ ہر مسلمان و کلمہ گو کو اس متبرک مقام کی زیارت کی سعادت نصیب فرمائے۔ (آمین!)
جس سڑک پر یہ عظیم اور متبرک مکان موجود ہے اس سڑک کا نام ’’شارع ملک سعود‘‘ ہے۔
  عرفات
عرفات کا میدان حجاز مقدس کا متبرک میدان ہے۔ جہاں ہر سال اسلام کا عظیم اجتماع ’’وقوفِ عرفات‘‘ ہوتا ہے۔ جسے حج کا رکن اعظم کہا جاتا ہے۔ یہی وہ میدان مبارک ہےجوروزِحشرکامیدان قرار پائے گا اور اسی میدان میں انسانوں کے اعمال کا حساب کتاب ہوگا۔اسی میدان میں خوش نصیبوں کو جنت کی نوید اور بد قسمتوں کو دوزخ کا مژدہ سنایا جائے گا۔ یہیں اللہ رب العزت کی میزان نصیب ہو گی۔ حجاج اور زائرین کے ذہنوں میں رسول اللہ ﷺ کے اس آخری خطبے کے جزئیات بھی ہونے چاہئیں جو آپؐ نے اپنے آخری حج کے موقع پردئیےتھے۔
جبلِ رحمت
میدان عرفات میں واقع یہ پہاڑی ’’جبلِ رحمت ‘‘ نہایت متبرک اور تاریخ ساز اہمیت کی حامل ہے۔ اس پہاڑی کی چوٹی پر ایک سفید رنگ کا ستوں بنایا گیا ہے جو اس بات کی نشاندہی کرتاہےکہ یہ وہ مقام ہے جہاں سیدنا آدم ؑ اور سیدہ بی بی حوا جنت سے نکالے جانے کے بعد دوبارہ آملے تھے۔ان کا یہ ملاپ اللہ بزرگ و برتر کی رحمت کے باعث ممکن ہوا تھا لہٰذا اس مناسبت سے اسے ’’جبلِ رحمت‘‘ یعنی رحمت کا پہاڑ کہتے ۔ یہی وہ بابرکت پہاڑ ہے جس پر کھڑے ہو کر ہادی بر حق سیدنا محمد ﷺ نے حج الوداع کے موقع پر تاریخ ساز خطبہ ارشاد فرمایاتھا۔
مسجدِ نمرہ
میدانِ عرفات میں واقع ’’مسجدِ نمرہ‘‘ کی اہمیت ہر حاجی بخوبی جانتا ہے یوم عرفہ یعنی 9ذوالحجہ کو ہر سال یہاں خطبہ دیا جاتا ہے۔ اس مسجد کی دو باتیں نہایت دلچسپ ہیں۔ اول تو یہ یہاں سال بھر میں صرف ایک دن دو نمازیں ادا کی جاتی ہیں۔ اس کے علاوہ اس مبارک و متبرک مسجد میں کوئی اور آذان یا نمازِ فرض نہیں ہوتی ۔ وقوفِ عرفات یعنی 9 ذوالحجہ کو جب پوری دنیاکے حاجی لبیک اللھم لبیک کہتے ہوئے اس مسجد اور میدان عرفات میں جمع ہوتے ہیں تو یہاں ایک آذان اور دواقامتوں کے ساتھ صلوٰۃ الظہر اور صلوٰۃ العصر ایک ساتھ قصر کرکے پڑھی جاتی ہیں۔ اس مسجدکی دوسری دلچسپ بات یہ ہے کہ اس کا کچھ حصہ حددو د عرفات کے باہر ہے جس کے باعث وقوفِ عرفات کے موقع پراس مسجد شریف کا وہ حصہ جو حدودِ عرفات کےاندر ہے حجاج سے کھچا کھچ بھرا ہوتا ہے جبکہ حدودِ کے باہر کا حصہ بالکل خالی رہتا ہے۔حکم ربانی کی یہ رکاوٹ کس قدر طاقتور ہے کہ کسی مادی رکاوٹ کے نہ ہونے کے باوجود کوئی مسجدکے دوسرے حصے کی جانب جانے کی جرات نہیں کرتا ۔پوریے میدان عرفات اور مسجدِ نمرہ کے ارد گرد بڑے بڑے مضبوط پول لگائے گئے ہیں جن پر آج کل پیلا رنگ کر دیا گیا ہےجو
اس باتبا کی نشاندہی کرتا ہے کہ یہ جگہ حدودِ عرفات میں ہے۔
منٰی
منٰی وہ مبارک میدان ہے جہاں اسلامی تاریخ کے بہت سے روحانی واقعات ظہور پذیر ہوئے، اسی میدان میں آزمائش سیدنا ابراہیم ؑ اور سیدنا اسماعیلؑ ہوئی جب سیدنا ابراہیم خلیل اللہ نےاپنےخواب کو سچا کر دکھایا ارو اللہ کی راہ میں اپنے بیٹے کی قربانی دینے کے لئے تیار ہوئے۔ منٰی میں ہی وہ مقام موجود ہے جہاں رسول اللہ ﷺ پر سورۂ کوثر نازل ہوئی۔ یہاں ایک اورنہایت متبرک جگہ ’’مسجد عقبہ‘‘ ہے جہاں اہل مدینہ نے رسول اللہ ﷺ کے دست مبارک دو بعتیں کیں۔اس میدان مبارک میں ’’منٰی‘‘ کی مرکزی مسجد ’’مسجد خیف‘‘ بی ہے جہاں سترانبیاء اکرام مدفون ہیں۔ ’’منٰی‘‘ وہ میدان ہے جہاں حجاج حج کے پانچ دنوں میں سے چاردن اور چار راتیں  گزارتے ہیں اور اسی مناسبت سے یہاں حاجیوں کا ایک شہر 8 ذوالحجہ سے 12 زوالحجہ تک قائم ہو جاتا ہے۔
جمرات
جمرات دراصل میدان منٰی میں وہ تین مقامات ہیں جہاں انسان کے اذلی دشمن ’’ابلیس‘‘ یعنی شیطان ملعون نے اللہ کے نبی سیدنا ابراہیم ؑ کو ورغلانے کی ناکام کوشش کی۔ سیدنا ابراہیم ؑ نےخواب میں دیکھا کہ وہ اپنے سب سے محبوب بیٹے’’اسماعیل ؑ ‘‘ کو اللہ کے حکم سے ذبح کر رہے ہیں۔ جب آپ نے اس کا ذکر اپنے بیٹے سے کیا تو سیدنا اسماعیل ؑ بھی عشق باری تعالیٰ میں جھوم اٹھے اور بولے ’’اباجان آپ اپنا خواب سچا کر دکھائیے۔مجھے آپ ان شاء اللہ ثابت قدم پائیں گے‘‘۔شیطان نے جن تین مقامات پر سیدانا ابراہیم ؑ کو ورغلانے کی ناکام کوشش کی تھی  وہاں علامتی اعتبار سے تین ستوں بنائے گئے ہیں۔ اس میں سے ایک ’’جمرہ الاولی‘‘ ہے جو مسجد خیف کے نزدیک ہے اس سے آگے تھوڑی دور پر ’’جمرہ وسطی‘‘ ہے اور اس سے آگےتقریباًمنٰی اختتام پر ’’جمرہ عقبہ‘‘ ہے۔
مزدلفہ
مزدلفہ کے میدان میں حجاج پوری رات کھلے آسمان تلے اللہ کی عبادت کرتے ہیں ۔اس میدان سے حاجیوں کو 49 کنکریاں چن کر اپنے پاس محفوظ کرنا پڑتی ہیں کیونکہ اگلی صبح ’’منٰی‘‘ پہنچ کر شیطان کو یہی کنکریاں ماری جاتی ہیں ۔ مزدلفہ کی مرکزی مسجد ’’معشرالحرام‘‘ ہے۔
وادی محسر
مزدلفہ کے مقدس اور روحانیت سے لبریز میدان سے متصل منٰی کی جانب ایک چھوٹا سا میدان ہے جسے ’’وادی محسر‘‘ یا ’’وادی النہار‘‘ کہتے ہیں ۔ یہ دراصل عذاب کا میدان ہے اور حاجیوں کے لئے بالخصوص اور دیگر لوگوں کے لئے بالعموم حکم ہے کہ قیامت تک کوئی اس میدان میں کبھی کسی غرض سے نہ رکے۔بہتر تو یہ ہے کہ اس میدان سے گزرا ہی نہ جائے اور اگر کسی طور اس سے گزرنا ناگزیر ہو تو ضروری ہے کہ پیدل چلنے والے اپنی عام رفتا کو بڑھا کر اور سواریاں بھی اپنی اسپیڈ تیز کرکے اس عذاب کے میدان سے جلد از جلد گزر جائیں۔دراصل یہی وہ میدان ہے جہاں اللہ کے حکم سے ابابیلوں کے جنڈ کے جھنڈ ’’ابرہہ‘‘ کے ہاتھی بردار لشکر پر کنکریاں برسانے آئے تھے۔ ابرہہ جو یمن کا گورنر تھا، اللہ کے گھر کعبۃاللہ کو معاذاللہ ڈھانےکاخواب لیے اپنے دیوہیکل ہاتھیوں کے ساتھ مکہ کی جانب بڑھ رہا تھا ۔ کنکریاں دراصل کنکریاں نہیں بلکہ ’’حکم ربی‘‘ تھیں اور پھر دنیا نے دیکھا کہ اس وادی محسر میں ایک عذاب برپاہو گیا ۔ ہاتھی بھُس بن گئے۔ تمام فوج نیست و نابود ہو گئی اور یہ میدان قیامت تک کے لئے عبرت گاہ بن گیا۔
Advertisements
2 comments
  1. kauserbaig said:

    اس عظیم اور متبرک و مبارک گھر کی زیارت کرنی ہے تو جلد ہی کرلیجئے نہیں تو ہوسکتا ہے کہ آگے اس سے محروم رہے کیونکہ کئی بار اس کے ڈھنے کی نیوز سنی گئی۔۔

  2. نکتہ ور said:

    جس مکان کو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت سے منسوب کیا جاتا ہے اس کے متعلق بالیقین کہنا مشکل ہے کہ یہ جگہ واقعی وہی ہے جہاں حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت ہوئی۔

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | Dars e Nizami Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

MAHA S. KAMAL

INTERNATIONAL RELATIONS | POLITICS| POLICY | WRITING

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

%d bloggers like this: