حضرت موسى علیہ السلام -6

یہودیوں میں گوسالہ پرستى كاآغاز

قرآن میں افسوسناك اور تعجب خیز واقعات میں سے ایك واقعہ كا ذكر ہوا ہے جو حضرت موسى علیہ السلام كے میقات كى طرف جانے كے بعد بنى اسرائیل میں رونما ہوا۔وہ واقعہ ان لوگوں كى گوسالہ پرستى ہے۔ جو ایك شخص بنام”سامری”نے زیور و آلات بنى اسرائیل كے ذریعے شروع كیا۔
سامرى كو چونكہ اس بات كا احساس تھاكہ قوم موسى علیہ السلام عرصہ دراز محرومى اور مظلومى كى زندگى بسر كررہى تھى اس وجہ سے اس میں ماد ہ پرستى پائی جاتى تھى اور حب زر كا جذبہ بدرجہ اتم پایا جاتا تھا۔ جیسا كہ آج بھى ان كى یہى صفت ہے لہذا اس نے یہ چالاكى كى كہ وہ مجسمہ سونے كا بنایاكہ اس طرح ان كى تو جہ زیادہ سے زیادہ اس كى طرف مبذول كراسكے۔
اب رہا یہ سوال كہ اس محروم و فقیر ملت كے پاس اس روز اتنى مقدارمیں زروزیور كہاں سے آگیا كہ اس سے یہ مجسمہ تیار ہوگیا؟اس كا جواب روایات میں اس طرح ملتا ہے كہ بنى اسرائیل كى عورتوں نے ایك تہوار كے موقع پر فرعونیوں سے زیورات مستعار لئے تھے یہ اسوقت كى بات ہے جس كے بعد ان كى غرقابى عمل میں آئی تھی۔اس كے بعد وہ زیورات ان عورتوں كے پاس باقى رہ گئے تھے۔
اتنا ضرور ہے كہ یہ حادثہ مثل دیگر اجتماعى حوادث كے بغیر كسى آمادگى اور مقدمہ كے وقوع پذیز نہیں ہوا بلكہ اس میں متعدد اسباب كار فرما تھے،جن میں سے بعض یہ ہیں :
بنى اسرائیل عرصہ دراز سے اہل مصر كى بت پرستى دیكھتے آرہے تھے۔ جب دریائے نیل كو عبور كیا تو انہوں نے ایك قوم كو دیكھا جو بت كى پرستش كرتى تھی۔ جیسا كہ قرآن نے بھى اس كا ذكر كیا ہے اور گذشتہ میں بھى اس كا ذكر گزرا كہ بنى اسرائیل نے حضرت موسى علیہ السلام سے ان كى طرح كا بت بنانے كى فرمائش كى جس پر حضرت موسى علیہ السلام نے انہیں سخت سرزنش كی۔
حضرت موسى علیہ السلام كے میقات كاپہلے تیس راتوں كا ہونا اس كے بعد چالیس راتوں كا ہوجانا اس سے بعض منافقوں كو یہ موقع ملاكہ حضرت موسى علیہ السلام كى وفا ت كى افواہ پھیلا دیں ۔
قوم موسى علیہ السلام میں بہت سے افرادكا جہل و نادانى سے متصف ہونا اس كے مقابلے میں سامرى كى مكارى و مہارت كیونكہ اس نے بڑى ہوشیارى سے بت پرستى كے پروگرام كو عملى جامہ پہنایا، بہر حال ان تمام باتوں نے اكٹھا ہوكر اس بات كے اسباب پیدا كئے كہ بنى اسرائیل كى اكثریت بت پرستى كو قبول كرے اور”گوسالہ”كے چاروں طرف اس كے ماننے والے ہنگامہ برپاكردیں ۔
دودن میں چھ لاكھ گوسالہ پرست بن گئے
سب سے بڑھ كرعجیب بات یہ ہے كہ بعض مفسرین نے یہ بیان كیا ہے كہ بنى اسرائیل میں یہ انحرافى تبدیلیاں صرف گنتى كے چند دنوں كے اندر واقع ہوگئیں جب موسى علیہ السلام كو میعاد گاہ كى طرف گئے ہوئے 35/دن گزر گئے تو سامرى نے اپنا كام شروع كردیا اور بنى اسرائیل سے مطالبہ كیا كہ وہ تمام زیورات جو انہوں نے فرعونیوں سے عاریتاًلئے تھے اور ان كے غرق ہوجانے كے بعد وہ انھیں كے پاس رہ گئے تھے انہیں جمع كریں چھتیسویں ، سنتیسویں اور اڑ تیسویں دن انہیں ایك كٹھائی میں ڈالااور پگھلاكر اس سے گوسالہ كا مجسمہ بنا دیا اور انتالیسویں دن انہیں اس كى پرستش كى دعوت دى اور ایك بہت بڑى تعداد (كچھ روایات كى بناء پر چھ لاكھ افراد) نے اسے قبول كرلیااور ایك روز بعد یعنى چالیس روز گزرنے پر موسى علیہ السلام واپس آگئے ۔
قرآن اس طرح فرماتا ہے: ”قوم موسى نے موسى كے میقات كى طرف جانے كے بعد اپنے زیوارات وآلات سے ایك گوسالہ بنایا جو ایك بے جان جسد تھا جس میں سے گائے كى آواز آتى تھی۔(سورہ اعراف آیت 148)
اسے انہوں نے اپنے واسطے انتخاب كیا ”
اگرچہ یہ عمل سامرى سے سرزد ہوا تھا۔( جیسا كہ سورہ طہ كى آیات میں آیاہے)
لیكن اس كى نسبت قوم موسى كى طرف دى گئی ہے اس كى وجہ یہ ہے كہ ان میں سے بہت سے لوگوں نے اس كام میں سامرى كى مدد كى تھى اور وہ اس كے شریك جرم تھے اس كے علاوہ ان لوگوں كى بڑى تعداد اس كے فعل پر راضى تھى ۔
قرانى گفتگو كاظاہر یہ ہے كہ تمام قوم موسى اس گوسالہ پرستى میں شریك تھى لیكن اگردوسرى آیت پر نظر كى جائے جس میں آیا ہے كہ :
”قوم موسى میں ایك امت تھى جو لوگوں كو حق كى ہد آیت كرتى تھى اور اسى كى طرف متوجہ تھی”۔( سورہ اعراف آیت 159)
اس سے معلوم ہوگا كہ اس سے مراد تمام امت موسى نہیں ہے بلكہ اس كى اكثریت اس گوسالہ پرستى كى تابع ہوگئی تھی، جیسا كہ آئندہ آنے والا ہے كہ وہ اكثریت اتنى زیادہ تھى كہ حضرت ہارون علیہ السلام مع اپنے ساتھیوں كے ان كے مقالے میں ضعیف وناتواں ہوگئے تھے ۔
گوسالہ پرستوں كے خلاف شدید رد عمل
یہاں پر قرآن میں اس كشمكش اور نزاع كا ماجرا بیان كیا گیا ہے جو حضرت موسى علیہ السلام اور گوسالہ پرستوں كے درمیان واقع ہوئی جب وہ میعادگاہ سے واپس ہوئے جس كى طرف گذشتہ میں صرف اشارہ كیا گیا تھا یہاں پر تفصیل كے ساتھ حضرت موسى علیہ السلام كے اس رد عمل كو بیان كیا گیا ہے جو اس گروہ كے بیدار كرنے كے لئے ان سے ظاہر ہوا ۔
پہلے ارشاد ہوتا :” جس وقت موسى غضبناك ورنجیدہ اپنى قوم كى طرف پلٹے اور گوسالہ پرستى كانفرت انگیز منظر دیكھا تو ان سے كہا كہ تم لوگ میرے بعد برے جانشین نكلے تم نے میرا آئین ضائع كردیا ”۔( سورہ اعراف آیت 150)
یہاں سے صاف معلوم ہوتا ہے كہ حضرت موسى علیہ السلام میعاد گاہ پروردگار سے پلٹتے وقت قبل اس كے كہ بنى اسرائیل سے ملتے، غضبناك اور اندو ہگین تھے، اس كى وجہ یہ تھى كہ خدا نے میعادگاہ میں انہیں اس كى خبردے دى تھى ۔ جیسا كہ قرآن كہتا ہے :میں نے تمہارے پیچھے تمہارى قوم كى آزمائش كى لیكن وہ اس آزمائش میں پورى نہ اترى اور سامرى نے انہیں گمراہ كر دیا۔
اس كے بعد موسى علیہ السلام نے ان سے كہا:” آیا تم نے اپنے پروردگار كے فرمان كے بارے میں جلدى كى ”۔( سورہ اعراف آیت 150)
تم نے خدا كے اس فرمان، كہ اس نے میعاد كا وقت تیس شب سے چالیس شب كردیا ، جلدى كى اور جلد فیصلہ كردیا ، میرے نہ آنے كو میرے مرنے یا وعدہ خلافى كى دلیل سمجھ لیا، حالانكہ لازم تھا كہ تھوڑا صبر سے كام لیتے ، چند روز اور انتظار كرلیتے تاكہ حقیقت واضح ہوجاتى ۔
اس وقت جبكہ حضرت موسى علیہ السلام بنى اسرائیل كى زندگى كے ان طوفانى وبحرانى لمحات سے گزر رہے تھے، سرسے پیرتك غصہ اور افسوس كى شدت سے بھڑك رہے تھے ،ایك عظیم اندوہ نے ان كے وجود پر سایہ ڈال دیا تھا اور انہیں بنى اسرائیل كے مستقبل كے بارے میں بڑى تشویش لاحق تھی، كیونكہ تخریب اور تباہ كارى آسانى سے ہوجاتى ہے كبھى صرف ایك انسان كے ذریعے بہت بڑى خرابى اور تباہى واقع ہوجاتى ہے لیكن اصلاح اور تعمیر میں دیر لگتى ہے ۔
خاص طور پر جب كسى نادان متعصب اورہٹ دھر م قوم كے درمیان كوئی غلط سازبجادیا جائے تو اس كے بعد اس كے برے اثرات كا زائل كرنا بہت مشكل ہوتا ہے ۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | Dars e Nizami Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

MAHA S. KAMAL

INTERNATIONAL RELATIONS | POLITICS| POLICY | WRITING

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

%d bloggers like this: