نماز عید الالضحٰی

 نماز عید الالضحٰی کا طریقہ کار
نماز عید الاالضحٰی کا طریقہ کار کچھ یوں ہے کہ:پہلے نماز کی نیت کریں :
میں نیت کرتا ہوں دو رکعت نماز (عید الاالضحیٰ/عید الفطر )کی واجب چھ زائد تکبیروں کے واسطے اللہ عزوجل کے ،منہ میرا کعبہ شریف کے اور پیچھے اس امام کے ۔پھر امام اور مقتدی کانوں تک ہاتھ اٹھائیں اور تحریمہ تکبیر یعنی اللہ اکبر کہہ کر حسب ِمعمول ناف کے نیچے ہاتھ باندھ لیں اور ثناء یعنی سبحٰنک اللھم پڑھیں ۔پھر (امام و مقتدی ہر دو) اللہ  اکبر کہتے ہوئے دونوں ہاتھ کانوں تک اٹھائیں اور چھوڑدیں‘ (ہاتھ چھوڑ کر اتنی دیر توقف کریں کہ تین مرتبہ سبحان اللہ کہہ سکیں) پھر دوسری مرتبہ اسی طرح اللہ اکبر کہتے ہوئے کانوں تک ہاتھ اٹھائیں اور چھوڑدیں اور اسی قدر توقف کریں‘ پھر تیسری مرتبہ اللہ اکبر کہتے ہوئے کانوں تک ہاتھ اٹھاکر (اس دفعہ نہ چھوڑیں بلکہ) باندھ لیں‘ پھر امام (آہستہ) تعوذ یعنی اعوذ باللہ اور تسمیہ یعنی بسم اللہ پڑھ کر الحمد شریف یعنی سورۂ فاتحہ اور دوسری سورۃ جہر کے ساتھ پڑھے اور قاعدہ کے موافق رکوع و سجود وغیرہ کرکے دوسری رکعت شروع کرے‘ جب دوسری رکعت میں قرأت (سورۂ فاتحہ اور دوسری سورۃ) ختم کرچکے تو (امام و مقتدی ہر دو) پھر اللہ اکبر کہتے ہوئے دونوں ہاتھ کانوں تک اٹھائیں اور چھوڑدیں اور تین تسبیح کے موافق توقف کریں‘ اسی طرح دوسری اور تیسری تکبیر کہتے اور کانوں تک ہاتھ اٹھاکر چھوڑتے جائیں (یعنی تیسری تکبیر کے بعد بھی ہاتھ نہ باندھیں چھوڑے رہیں) پھر بغیر ہاتھ اٹھائے چوتھی تکبیر کہہ کر رکوع میں جائیں اور حسب قاعدہ نماز پوری کرلیں۔
سلام کے بعد کے بعد امام منبر پر کھڑا ہوکر خطبہ پڑھے اور تمام لوگ خاموش بیٹھے خطبہ سنیں‘ عیدین میں بھی دو خطبے ہیں اور دونوں کے درمیان بیٹھنا مسنون ہے۔
نوٹ:
٭عیدین کی نماز میں (جمعہ کی طرح) پہلی رکعت میں سورۂ جمعہ اور دوسری رکعت میں سورۂ منافقون یا پہلی میں  سَبِّحْ اِسْمَ ربک الاعلی اور دوسری میںھَلْ اَتٰکَ حدیث الغاشیۃپڑھنا مستحب ہے۔
٭عید الا الضحی کے خطبے میں قربانی کے احکام اور تکبیراتِ تشریق بتائے اور عید الفطر کے خطبے میں صدقۂ فطر کے احکام تعلیم کرے۔
٭مقتدیوں پر جیسے اور خطبوں کا سننا بھی واجب ہے ، یونہی عیدین کے خطبوں کا سننا بھی واجب ہے۔
٭ اگردوران نماز امام یا کوئی مقتدی عیدکی زائد تکبیریں یا ترتیب بھول جائے توازدحام کی وجہ سے نماز درست ہوگی سجدہ سہو کی بھی ضرورت نہیں۔
٭ اگر کوئی نمازمیں تاخیر سے پہنچا اور ایک رکعت نکل گئی تو فوت شدہ رکعت کو پہلی رکعت کی ترتیب کے مطابق قضاء کرے گا یعنی ثناء (سبحانک اللھم) کے بعد تین زائد تکبیریں کہے گااور آگے ترتیب کے مطابق رکعت پوری کریگا۔
عید الاضحی کے مستحبات
عید الاضحی کے مسنون و مستحبات یہ ہیں :
٭غسل کرنا ٭عمدہ سے عمدہ لباس جو موجود ہو پہننا٭مسواک کرنا٭اپنی آرائش کرنا (اصلاح بنوانا‘ ناخن کتروانا) ٭ خوشبو لگانا۔ ٭عید کے دن فجر کی نماز محلہ کی مسجد میں پڑھنا٭ عید الضحی کی نماز سویرے پڑھنا مسنون ہے ٭عید کی نماز خاص عیدگاہ میں جاکر ادا کرنا ٭عیدگاہ میں بہت سویرے جانا ٭عید الاضحی میں بغیر کچھ کھائے نماز کو جانا اور واپس آنے کے بعدکوئی چیز کھانا مسنون ہے ٭عیدگاہ کو ایک راستہ سے جانا اور دوسرے راستہ سے واپس آنا ٭عیدگاہ کو پیدل جانا (بشرطیکہ جاسکے) ٭ عید الاضحی میں راستہ میں تکبیر:اَللّٰهُ اَکْبَرْ اَللّٰهُ اَکْبَرْ لَا اِلٰهَ
اِلَّا اللّٰهُ وَ اللّٰهُ اَکْبَرْ اَللّٰهُ اَکْبَرْ وَ لِلّٰهِ الْحَمْدِ بآواز بلندپڑھتے ہوئے جانا ٭خیرات کی زیادتی ٭خوشی کا اظہار اور مبارکباد دینا۔
میری جانب سے آپ کو دلی عید مبارک قبول ہو۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

w

Connecting to %s

%d bloggers like this: