مُسِنَّۃٌ اور جذعہ کیا ہیں؟

جب جانور کے دودھ کے دانت دوسرے نئے دانت نکلنے کی وجہ سے گر جائیں تو وہ    مُسِنَّۃٌ     کہلاتا ہے۔(المصباح المنیر 292/1، لسان العرب 222/13

عموماً منڈیوں میں دھوکا دینے کے لیے بعض لوگ جانور کے دانت خود توڑ دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ یہ دو دانتا ہوگیا ہے لیکن یہ بات یاد رہے کہ دو دانتا اس وقت ہوگا جب اس کے ثنایا طلوع ہوں
گے، دودھ کے دانتوں کا ٹوٹ جانا ہی کافی نہیں بلکہ نئے دانتوں کا نکلنا بھی  
مُسِنَّۃٌ   ہونے کی شرط ہے۔ نیز   مُسِنَّۃٌ    کی اس تعریف میں وہ جانور بھی شامل ِ  مُسِنَّۃٌ   ہیں جن کے چار یا چھ دانت نئے نکل آئیں کیونکہ ثنایا کے طلوع ہونے کے بعد جانور کانام    مُسِنَّۃٌ     ہے
امام شوکانی ﷫نے بھی یہی بات نیل الأوطار میں بایں الفاظ تحریر فرمائی ہے:  قال العلماء المنسۃ ھی الثنیۃ من کل شیء من الإبل والبقر والغنم  فما فوقھا  (نیل الأوطار202,201/5 وقال النووی قریباً منہ شرح مسلم للنووی 99/13)
اہل علم کا کہنا ہے کہ   مُسِنَّۃٌ   دو دانتا یا دو دانتا سے اوپر بولا جاتا ہے ،تمام جانوروں میں خواہ وہ اونٹ ہو گائے ہو یا بکری۔
جذعہ کی وضاحت
بھیڑ کی جنس (دنبہ ، بھیڑ، چھترا) صحیح ترین قول کے مطابق جب ایک سال مکمل کر لے تو جذعہ کہلاتی ہے۔ (لسان العرب 44,45/8، القاموس المحیط 915/1)
مندرجہ بالا بحث سے معلوم ہوا کہ قربانی کا جانور دودانتا ( مُسِنَّۃٌ ) ہونا ضروری ہے اور اگر مُسِنَّۃٌ کے حصول میں دشواری ہو تو پھر صرف بھیڑ کی جنس سے جذعہ کرنے کی رخصت ہے جو کہ دیگر جنسوں میں نہیں۔
براء بن عازب ﷜فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:إن أول ما نبدأ به فی یومنا هذا أن نصلی ، ثم نرجع فننحر ، من فعله فقد أصاب سنتنا ، ومن ذبح قبل ، فإنما هو لحم قدمه لأهله ، لیس من النسك فی شیء فقام أبو بردة بن نیار ، وقد ذبح ، فقال : إن عندی جذعة ، فقال : اذبحها ولن تجزی عن أحد بعدك قال مطرف : عن عامر ، عن البراء : قال النبی ﷺ : من ذبح بعد الصلاة تم نسكه ، وأصاب سنة المسلمینہم اس دن نماز پڑھنے سے ابتداء کرتے ہیں پھر واپس لوٹتے ہیں اور قربانی کرتے ہیں جس نے اسی طرح کیا تو اس نے درست کیا اور جس نے نماز سے قبل ہی قربانی کا جانور ذبح کر لیا تو وہ قربانی نہیں ہے بلکہ عام گوشت ہے جو کہ اس نے اپنے گھر والوں کے لیے تیار کیا ہے۔ تو ابو برده بن نیار ؓ کھڑے ہوئے ، انھون نے نماز عید سے قبل ہی قربانی کا جانور ذبح کرلیا تھا ۔ کہنے لگے کہ میرے پاس (بکری کا ) جذعہ ہے۔ تو آپ ﷺ نے فرمایا: تو ذبح کرلے اور تیرے بعد کسی سے یہ کفایت نہیں کرے گا۔ (صحیح البخاری – كتاب الأضاحی، باب سنة الأضحیة – حدیث:‏5545)
یہ حدیث صحیح بخاری میں مختلف الفاظ کے ساتھ دس جگہوں پر آئی ہے ۔ اس حدیث سے بعض لوگ یہ مسئلہ نکالنے کی کوشش کرتے ہیں کہ بکری کا جذعہ بھی بوقت دشواری کفایت کرجاتا ہے ، کیونکہ نبی کریم ﷺ نے حالت عسر میں اس کو قربانی دینے کی اجازت دی۔
لیکن یہ حدیث ان کے لیے دلیل نہیں بنتی کیونکہ خود رسول اکرمﷺ ہی فرمارہے ہیںولن تجزی عن أحد بعدك کہ تیرے بعد بکری کا جذعہ کسی کو بھی کفایت نہ کرے گا۔ حالت عسر و عدم عسر کی کوئی قید نہیں لگائی۔
کچھ دوسرے ایسے ہیں جو یہ کہتے ہیں کہ صرف بکری کا جذعہ کفایت نہیں کرتا باقی سب جانوروں کا جذعہ کفایت کرجاتا ہے۔ کیونکہ یہاں تذکرہ بکری کا ہورہاہے اور اس کے جذعہ کی کفایت نہ کرنے کا حکم دیا جارہاہے۔مگر ان کی یہ بات بھی درست نہیں کیونکہ صحیح بخاری، کتاب الجمعۃ باب التکبیر إلی العید حدیث 968) میں یہ روایت ان الفاظ سے مروی ہے ولن تجزی جذعة عن أحد بعدك تیرے بعد کوئی بھی جذعہ کسی سے بھی کفایت نہ کرے گا۔ یہاں لفظ جذعہ نکرہ ہے اور اہل علم جانتے ہیں کہ جب نکرہ نفی کے حیز میں آئے تو عموم کا فائدہ دیتا ہے۔
جذرعہ کی کچھ دیگر اشکالات
1-جذع کی قربانی کے جواز میں ایک روایت یہ بھی پیش کی جاتی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ہے: نعم أو نعمت الأضحیة الجذع من الضأنبھیڑ کا جذعہ بہترین قربانی ہے (سنن البیہقی الکبریٰ )
لہٰذا ثابت ہوا کہ بھیڑ کا جذعہ کرنا مسنۃ سے بھی افضل ہے کیونکہ نبی کریم ﷺ اس کو بہترین قربانی قرار دے رہے ہیں۔لیکن یہ روایت پایۂ ثبوت کو نہیں پہنچتی کیونکہ اس میں کدام بن عبدالرحمن اور اس کا شیخ ابو کباش دونوں مجہول ہیں۔
2-مجاشع بن مسعود بن ثعلبہ﷜نے ایک سفر میں یہ اعلان کروایا کہ رسول اللہ ﷺ فرمایا کرتے تھے کہ
إن الجذع یوفی مما یوفی منہ الثنی جذعہ ہر اس جانور کا کفایت کرجاتا ہے جس کا مسنۃ کفایت کرتا ہے (سنن أبی داؤد ، کتاب الضحایا، باب مایجوز من السن فی الضحایا2799)
اس حدیث سے معلوم ہواکہ دشواری کے وقت بکری، اونٹ، گائے کی جنس سے بھی جذعہ کفایت کرےجائے گا۔لیکن یہ بات درست نہیں ہے کیونکہ حدیث لا تذبحوا إلا مسنة ، إلا أن یعسر علیكم ، فتذبحوا جذعة من الضأناس کی وضاحت کر رہی ہے کہ صرف بھیڑ کا جذعہ ہی مسنۃ سے کفایت کرسکتا ہےاور وہ بھی بوقت دشواری،کیونکہ اسی روایت میں اس بات کی وضاحت موجود ہے کہ یہ فرمان رسول اللہ ﷺ نے دوران سفر جاری فرمایا تھا، جب صحابہ کرام دو،دو اور تین ، تین جذعہ دے کر ایک، ایک مسنۃ خریدنے پر مجبور تھےاور دشواری تھی مسنۃ کو خریدنے میں ۔ (سنن نسائی ، کتاب الضحایا، باب المسنۃ والجذعۃ4383)
3-ابو ہریرہ ﷜فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:الجذع من الضأن خیر من السید من المعز بھیڑکا کھیرا بکری کے دو دانتے سے بہتر ہے۔(مستدرک حاکم)
اسکی سند میں ابو ثفا ل ثمامہ بن وائل نامی راوی ہے ۔ امام بخاری فرماتے ہیں:فی حدیثہ نظر یعنی یہ راوی ضعیف ہے۔ (تہذیب الکمال )
4-أن الجذع من الضأن خیر من الثنیة من الإبل والبقر , ولو علم الله ذبحا أفضل منه لفدى به إبراهیم علیه السلامبھیڑ کا جذعہ دودانتے اونٹ اور گائے سے بہتر ہے اور اگر اللہ تعالیٰ اس سےبہتر کسی ذبیحہ کو سمجھتے تو ابراہیم ؑ کو وہی عطافرماتے۔ ( سنن البیهقی الکبریٰ)
اس کی سند میں اسحاق بن ابراہیم الحنینی راوی ضعیف ہے۔
5-ابو ہریرہ ﷜بیان فرماتے ہیں:أن رجلا أتى النبی ﷺ بجذع من الضأن مهزول خسیس وجذع من المعز سمین یسیر فقال : یا رسول الله هو خیرهما أفأضحی به ؟ فقال : ضح به فإن الله أغنىایک شخص نبی اکرم ﷺ کی پاس بھیڑ کا کمزور وحقیر سا جذعہ اور بکری کاموٹا تازہ جذعہ لے کر آیا اور کہنے لگا کہ یہ (بکری والا جذعہ) ان دونوں میں سے بہتر ہے کیا میں اس کی قربانی کرلوں ؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا: اس کی قربانی کر لے یقیناً اللہ تعالیٰ بہت غنی ہے۔ (مستدرک حاکم)
اس کی سند میں قزعۃ بن سوید ضعیف ہے۔
6-یجوز الجذع من الضأن ، أضحیة بھیڑ کا جذعہ قربانی کے لیے جائز ہے۔ (سنن ابن ماجہ )
اس کی سند میں ام محمد بن أبی یحیی مجہولہ ہے۔
الغرض اس قسم کی تمام روایات پایۂ ثبوت کو نہیں پہنچتی ہیں۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Worlds Largest Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

My Blog

Just another WordPress.com site

%d bloggers like this: