نبی ِ پاک ﷺ کا سفر ِ حج -2

گزشتہ سے پیوستہ 
خطبہ کے بعد حضرت بلالؓ  نے اذان اور پھر اقامت کہی۔ رسول اللہ ﷺ نے ظہر کی نماز پڑھائی۔ اس کے بعد حضرت بلالؓ نے پھر اقامت کہی اور  آپﷺ   نے عصر کی نماز پڑھائی اور  ان دونوں نمازوں کے درمیان کوئی اور  نماز نہیں پڑھی۔ اس کے بعد سوار ہو کر آپﷺ  جائے وقوف پر تشریف لے گئے۔ اپنی اونٹنی قصوا کا شکم چٹانوں کی جانب کیا اور  حبلِ مشاۃ (پیدل چلنے والوں کی راہ میں واقع ریتلے تودے ) کو سامنے کیا اور  قبلہ رُخ مسلسل (اسی حالت میں ) وقوف فرمایا۔ یہاں تک کہ سورج غروب ہونے لگا۔ تھوڑی زردی ختم ہوئی، پھر سورج کی ٹکیہ غائب ہو گئی۔ اس کے بعد آپﷺ  نے حضرت اُسامہؓ کو پیچھے بٹھایا او ر وہاں سے روانہ ہو کر مُزدلفہ تشریف لائے۔ مُزدلفہ میں مغرب اور  عشاء کی نمازیں ایک اذان اور  دو اقامت سے پڑھیں۔ درمیان میں کوئی نفل نماز نہیں پڑھی۔ اس کے بعد آپﷺ  لیٹ گئے ، اور  طلوع فجر تک لیٹے رہے۔ البتہ صبح نمودار ہوتے ہی اذان و اقامت کے ساتھ فجر کی نماز پڑھی۔ اس کے بعد قصوا پر سوار ہو کر مَشُعَر حَرام تشریف لائے اور قبلہ رُخ ہو کر اللہ سے دُعا کی اور
اس کی تکبیر و تہلیل اور  توحید کے کلمات کہے۔ یہاں اتنی دیر تک ٹھہرے رہے کہ خُوب اجالا ہو گیا۔
اسکے بعد سور ج طلوع ہونے سے پہلے پہلے منیٰ کے لئے روانہ ہو گئے۔ اور اب کی بار حضرت فضلؓ بن عباس کو اپنے پیچھے سوار کیا۔ بَطْنِ مُحِسَّر میں پہنچے تو سوار ی کو ذرا تیزی سے دوڑایا۔ پھر جو درمیانی راستہ جمرۂ  کبریٰ پر نکلتا تھا، اس سے چل کر جمرۂ  کبریٰ پر پہنچے۔ اس زمانے میں وہاں ایک درخت بھی تھا۔ اور جمرۂ  کبریٰ اس درخت کی
نسبت سے بھی معروف تھا۔ اس کے علاوہ جمرۂ کبریٰ کو جمرۂ  عقبہ اور  جمرۂ اُولیٰ بھی کہتے ہیں۔ پھر آپﷺ  نے جمرۂ  کبریٰ کو سات کنکریاں ماریں۔ ہر کنکری کے ساتھ تکبیر کہتے جاتے تھے۔ کنکریاں چھوٹی چھوٹی تھیں۔ جنہیں چٹکی میں لے کر چلایا جا سکتا تھا۔ آپﷺ  نے یہ کنکریاں بطنِ وادی میں کھڑے ہو کر ماری تھیں۔ اس کے بعد آپﷺ  قربان گاہ تشریف لے گئے اور  اپنے دست مبارک سے
۶۳ اونٹ ذبح کئے۔۔ پھر حضرت علی ؓ کو سونپ دیا اور انہوں نے بقیہ ۳۷ اونٹ ذبح کئے۔ اس طرح سو اونٹ کی تعداد پوری ہو گئی۔ آپﷺ   نے حضرت علیؓ  کو بھی اپنی ہدَی(قربانی) میں شریک فرما لیا تھا۔ اس کے بعد آپﷺ کے حکم سے ہر اُونٹ کا ایک ایک ٹکڑا کاٹ کر ہانڈی میں ڈالا اور  پکایا گیا۔ پھر آپﷺ  نے اور حضرت علیؓ نے اس گوشت میں سے کچھ تناول فرمایا اور  اس کا شوربا پیا۔
بعد ازاں رسول اللہ ﷺ سوار ہو کر مکّہ تشریف لے گئے۔ بیت اللہ کا طواف فرمایا۔ اسے طواف افاضہ کہتے ہیں۔ اور مکہ ہی میں ظہر کی نماز ادا فرمائی۔ پھر چاہِ زمزم پر بنوعبدالمطلب کے پاس تشریف لے گئے۔ وہ حجاج اکرام کو زمزم پلا رہے تھے۔ آپﷺ  نے فرمایا بنو عبدالمطلب تم لوگ پانی کھینچو۔ اگر یہ اندیشہ نہ ہوتا کہ پانی پلانے کے اس کام میں لوگ تمہیں مغلوب کر دیں گے تو میں بھی تم لوگوں کے ساتھ کھینچتا۔۔  یعنی اگر صحابہؓ  رسول اللہ ﷺ کو خود پانی کھینچتے ہوئے دیکھتے تو ہر صحابیؓ خود پانی کھینچنے کی کوشش کرتا، اور
اس طرح حجاج کو زمزم پلانے کا شرف بنو عبدالمطلب کو حاصل تھا۔ اس کا نظم ان کے قابو میں نہ رہ جاتا۔ چنانچہ بنو عبدالمطلب نے آپﷺ  کو ایک ڈول پانی دیا اور  آپﷺ  نے اس میں سے حسبِ خواہش پیا۔
آج یوم النحر تھا یعنی ذی الحجہ کی دس تاریخ تھی۔ نبیﷺ   نے آج بھی دن چڑھے (چاشت کے وقت) ایک خطبہ ارشاد فرمایا تھا۔ خطبہ کے وقت آپﷺ  خچر پر سوار تھے۔ اور  حضرت علیؓ آپﷺ   کے ارشادات صحابہؓ کو سُنا رہے تھے۔ صحابہؓ کرام کچھ بیٹھے اور  کچھ کھڑے تھے۔ آپﷺ  نے آج کے خطبے میں بھی کل کی کئی باتیں دُہرائیں۔
صحیح بخاری اور  صحیح مسلم میں حضر ت ابو بکر ؓ کا یہ بیان مروی ہے کہ نبی ﷺ نے ہمیں یوم النحر (دس ذی الحجہ) کو خطبہ دیا۔ فرمایا:
 زمانہ گھوم پھر کر اپنی اسی دن کی ہئیت پر پہنچ گہا ہے جس دن اللہ نے آسمان و زمین کو پیدا کیا تھا۔ سال بارہ مہینے کاہے۔ جن میں سے چار مہینے حرام کے ہیں ، تین پے در پے یعنی ذی قعدہ، ذی الحجہ اور  محرم اور  ایک رجب مضَر جو جمادی الآخرہ اور  شعبان کے درمیان ہے۔  
آپﷺ  نے یہ بھی فرمایا کہ یہ کون سا مہینہ ہے ؟  ہم نے کہا، اللہ اور  اس کے رسولﷺ  بہتر جانتے ہیں۔ اس پر آپﷺ  خاموش رہے ، یہاں تک کہ ہم نے سمجھا کہ آپﷺ  اس کا کوئی اور نام رکھیں گے۔ لیکن پھر آپﷺ  نے فرمایا۔ کیا یہ ذی الحجہ نہیں ہے۔ ؟ ہم نے کہا کیوں نہیں ! آپﷺ  نے فرمایا یہ کون سا شہر ہے ؟  ہم نے کہا اللہ اور  اس کے رسولﷺ   بہتر جانتے ہیں۔ اس پر آپﷺ  خاموش رہے یہاں تک کہ ہم نے سمجھا آپﷺ  اس کا کوئی اور نام رکھیں گے ، مگر آپﷺ  نے فرمایا۔ کیا یہ بلدہ (مکّہ) نہیں ہے۔ ؟  ہم نے کہا کیوں نہیں ! آپﷺ  نے فرمایا، اچھا تو یہ دن کون سا ہے۔ ؟ ہم نے کہا اللہ اور  رسولﷺ   بہتر جانتے ہیں۔ اس پر آپﷺ  خاموش رہے ، یہاں تک کہ ہم نے سمجھا آپﷺ  اس کا کوئی اور  نام رکھیں گے۔ مگر آپﷺ  نے فرمایا۔ کیا یہ یوم النحر(قربانی) کا دن، یعنی دس ذی الحجہ  نہیں ہے۔ ؟ ہم نے کہا کیوں نہیں ! آپﷺ  نے فرمایا، اچھا تو سنو! کہ تمہارا خون، تمہار ا مال اور  تمہاری آبرو ایک دوسرے پر ایسے ہی حرام ہے جیسے تمہارے اس شہر اور
تمہارے اس مہینے میں تمہارے آج کے دن کی حرمت ہے۔ اور  تم لوگ بہت جلد اپنے پروردگار سے ملو گے ، اور  وہ تم سے تمہارے اعمال کے متعلق پوچھے گا۔ لہٰذا دیکھو! میرے بعد پلٹ کر گمراہ نہ ہو جانا کہ آپس میں ایک دوسرے کی گردنیں مارنے لگو۔ بتاؤ! کیا میں نے تبلیغ کر دی؟ صحابہؓ نے کہا۔ ہاں !  آپﷺ  نے فرمایا۔  اے اللہ! گواہ رہ۔۔۔ جو شخص  موجود ہے وہ غیر موجود تک (میری باتیں ) پہنچا دے۔ کیونکہ بعض وہ افراد جن تک (یہ باتیں پہنچائی جائیں گی وہ بعض (موجود) سننے والے سے کہیں زیادہ ان باتوں کے فربست کو سمجھ سکیں گے۔  (صحیح بخاری)
ایک روایت میں ہے کہ آپﷺ  نے ا س خطبے میں یہ بھی فرمایا۔  یاد رکھو! کوئی بھی جرم کرنے والا اپنے سوا کسی اور  پر جرم نہیں کرتا (یعنی اس جرم کی پاداش میں کوئی اور  نہیں بلکہ خود مجرم ہی پکڑا جائے گا۔)یاد رکھو! کوئی جرم کرنے والا اپنے بیٹے پر یا کوئی بیٹا اپنے باپ پر جرم نہیں کرتا(یعنی باپ کے جرم میں بیٹے کو یا بیٹے کے جرم میں باپ کو نہیں پکڑا جائے گا۔) یاد رکھو! شیطان مایوس ہو چکا ہے کہ اب تمہارے اس شہر میں کبھی بھی اس کی پوجا کی جائے ، لیکن اپنے جن اعمال کو تم لوگ حقیر سمجھتے ہو ان میں اس کی اطاعت کی جائے گی اور  وہ اسی سے راضی ہو گا۔ (ترمذی، ابن ماجہ، مشکوٰۃ)
اس کے بعد آپﷺ   ایّام تشریق (۱۱۔ ۱۲۔ ۱۳ ذی الحجہ کو) منیٰ میں مقیم رہے۔ اس دوران آپﷺ  حج کے مناسک بھی ادا فرما  رہے تھے۔ ملّتِ ابراہیمی کے سنن ہدی بھی قائم کر رہے تھے ، اور  شرک کے آثار و نشانات کا صفایا بھی فرما رہے تھے۔ آپﷺ  نے ایّام تشریق میں بھی ایک دن خطبہ دیا۔ چنانچہ سنن ابی داؤد میں بہ سند  حسن مروی ہے کہ حضرت سراء بنت بنہان ؓ نے فرمایا کہ رسول اللہ ﷺ نے ہمیں رؤس کے دن (۱۲ ذی الحجہ) خطبہ دیا اور  فرمایا، کیا یہ دن ایّام تشریق کا درمیانی دن نہیں ہے ؟ (ابوداؤد) آپﷺ   کا آج کا خطبہ بھی کل (یو م النحر) کے خطبے جیسا تھا، اور یہ خطبہ سورۂ  نصر کے نزول کے بعد دیا گیا تھا۔ ایّام تشریق کے خاتمے پر دوسرے یوم النّفر یعنی ۱۳  ذی الحجہ کو نبیﷺ نے منیٰ سے کوچ فرمایا، اور  وادی اَبْطح کے خیف بنی کنانہ میں فروکش ہوئے۔ دن کا باقی ماندہ حصہ اور  رات وہیں گذاری، اور  ظہر، عصر، مغرب اور  عشاء کی نمازیں وہیں پڑھیں۔ البتہ عشاء کے بعد تھوڑا سا سو کر اُٹھے پھر سوار ہو کر بیت اللہ تشریف لے گئے اور  طوافِ وداع فرما آئے۔ اور  اب تمام مناسکِ حج سے فارغ ہو کر آپﷺ  نے سواری کا رُخ مدینہ منورہ کی راہ پر ڈال دیا۔ اس لئے نہیں کہ وہاں پہنچ کر راحت فرمائیں بلکہ اس لئے کہ اب پھر اللہ کی خاطر اللہ کی راہ میں ایک نئی جد و جہد کا آغاز فرمائیں۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | Dars e Nizami Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

MAHA S. KAMAL

INTERNATIONAL RELATIONS | POLITICS| POLICY | WRITING

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

%d bloggers like this: