ہجران قرآن

جب مسلمان قرآن چھوڑتا ہے۔
وَقَالَ الرَّسُولُ يَا رَبِّ إِنَّ قَوْمِي اتَّخَذُوا هَذَا الْقُرْآنَ مَهْجُورًا
ترجمہ اور رسولِ (اکرم ﷺ) عرض کریں گے اے رب! بیشک میری قوم نے اس قرآن کو بالکل ہی چھوڑ رکھا تھا(سورہ نمبر 25، سورہ الفرقان،آیت نمبر 30)
مشرکین قرآن پڑھے جانے کے وقت شور کرتے کہ قرآن نہ سنا جا سکے،یہ بھی ہجران قرآن ہے۔
اس پر ایمان نہ لانا اور عمل نہ کرنا بھی ہجران قرآن ہے۔
اس پر غور فکر نہ کرنا اور اس کے اوامر پر عمل نہ کرنا بھی ہجران قرآن ہے۔
قرآن کو چھوڑ کر دوسری کسی کتاب کو ترجیح دینا بھی ہجران قرآن ہے، یعنی قرآن کا ترک اور اس کا چھوڑ دینا بھی ہجران قرآن ہی ہے۔
ان سب کے خلاف نبی کریم ﷺ اللہ کی بارگاہ میں استغاثہ دائر فرمائیں گے۔
قیامت کے دن نبی کریم ﷺ اپنی امّت کی شکایت اللہ سبحان و تعالٰی سے کریں گے کہ نہ یہ لوگ قرآن کی جانب مائل تھے اور نا ہی رغبت سے قبولیت کے ساتھ سنتے تھے،بلکہ اوروں کو بھی اس کے سننے سے روکتے تھے۔
اتْلُ مَا أُوحِيَ إِلَيْكَ مِنَ الْكِتَابِ
ترجمہ (اے حبیبِ مکرّم!) آپ وہ کتاب پڑھ کر سنائیے جو آپ کی طرف (بذریعہ) وحی بھیجی گئی ہے(سورہ نمبر 29، سورہ العنکبوت،آیت نمبر 45)
قرآن مجید کی تلاوت متعدد مقاصد کے لئے مطلوب ہے، محض اجرو ثواب کے لئے، اس کے معنی و مطالب پر غور و فکر اور تردّد کے لئے، تدریس کے لئے اور وعظ و نصیحت کے لئے۔اس حکم تلاوت میں ساری ہی صورتیں شامل ہیں۔
وَاتْلُ مَا أُوحِيَ إِلَيْكَ مِن كِتَابِ رَبِّكَ لاَ مُبَدِّلَ لِكَلِمَاتِهِ وَلَن تَجِدَ مِن دُونِهِ مُلْتَحَدًا
ترجمہ اور آپ وہ (کلام) پڑھ کر سنائیں جو آپ کے رب کی کتاب میں سے آپ کی طرف وحی کیا گیا ہے، اس کے کلام کو کوئی بدلنے والا نہیں اور آپ اس کے سوا ہرگز کوئی جائے پناہ نہیں پائیں گے(سورہ نمبر 27، سورہ الکھف،آیت نمبر 27)
وَأَنْ أَتْلُوَاْ الْقُرْآنَ فَمَنِ اهْتَدَى فَإِنَّمَا يَهْتَدِي لِنَفْسِهِ وَمَن ضَلَّ فَقُلْ إِنَّمَا أَنَا مِنَ الْمُنذِرِينَ
ترجمہ نیز یہ کہ میں قرآن پڑھ کر سناتا رہوں سو جس شخص نے ہدایت قبول کی تو اس نے اپنے ہی فائدہ کے لئے راہِ راست اختیار کی، اور جو بہکا رہا تو آپ فرما دیں کہ میں تو صِرف ڈر سنانے والوں میں سے ہوں(سورہ نمبر 27، سورہ النمل،آیت نمبر 92)
میرا کام دعوت و تبلیغ ہے جو میری دعوت و تبلیغ سے مسلمان ہو جائے گا اس میں اسی کا فائدہ ہےکہ اللہ کے عذاب سے بچ جائے گا اور جو میری دعوت کو نہیں مانے گا اس میں میرا کیا اللہ تعالٰی خود اس سے حساب لے لیں گےاور جہنم کا مزا چکھا دیں گے۔
نبی کریم ﷺ کا ارشاد پاک ہے کہ قرآن مجید کی تلاوت کرو،کیونکہ یہ قیامت کے دن اپنے قاری کی یعنی تلاوت کرنے والے کی شفاعت کرئے گا۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: