مکروہ۔۔۔حصہ دہم

گزشتہ سے پیوستہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب اس فتنے کی خوب شہرت ہوئی تو علمائے وقت چوکنّا ہوئےکہ معاملہ مذہبی ہے سو پہلے اس کی تعلیمات جاننے کے لئے اس سے ملنے کی کوشش کی اور ایک وفت”کش”آیا۔
ابن مقنع کا واسطہ اب تلک سادہ لوح دہاتیوں سےہی ہوا تھا جو کہ اب اس کی مٹھّی میں تھے،لیکن ان علماؤں سے مل کر وہ کسی بحث میں الجھنا نہیں چاہتا تھا سو اس نے قلعے کے دروازے بند کر دیئے اور ملنے سے انکار کر دیا اس کے آدمیوں نے کہلا بھیجا کہ خدا ان سے خوش نہیں اس لئے ملاقات کا شرف نہیں دینا چاہتا اور وعید بھی دی ہے کہ وہ جلد ہی عذاب سے دوچار ہوں گے۔
وفد کے ارکان نے اندر جانے کی کوشش کی لیکن کامیابی نہ ہوئی وہ قلعے کے باہر ہی سو گئے۔ ابن مقنع بھی رات بھر کچھ سوچتا رہا اور پھر صبح تک وہ اپنے منصوبے میں کامیاب بھی ہو چکا تھا اس نے علماء کو اندر بلوا یا اور اپنے خاص کمرہ میں بلایا جہاں علما ء کو حیران کر دینے کے لئے مصنوعی سورج بھی اس کے سر پر ہوا میں معلق تھا ،جس کی دھوپ ان گرمیوں کے دن میں بھی ٹھنڈی تھی اور دیوایں بھی اس کے باعث ٹھنڈی پڑ رہی تھیں۔ہوا بھی معطر کہ گویا جنت سے آرہی ہو۔علما کو علم تھا کہ یہ شخص طلسم کا ماہر ہے وہ ذرا بھی مرعوب نہ ہوئے۔
"اے شخص اپنا نقاب ہٹا اور چہرہ دکھا کہ ہم تجھے دیکھیں اور بات کریں۔”
"میرے بنائے انسانو!،لازم ہے کہ پہلے مجھے سجدہ کرو۔”
"سجدہ صرف خداکے لئے ہوتا ہے”
"کیا فرشتوں نے آدم کو سجدہ نہ کیا؟انہوں نے بھی خاکی پیکر کو نہیں مجھے سجدہ کیا تھا۔تم بھی خاکی پیکر کو نہیں مجھے سجدہ کروگے۔”
"اگر تو خاکی ہے تو نقاب ہٹا”
"تم تو خود کو عالم کہتے ہو کیا علم نہیں کہ میرے نور کی تاب نہ لا سکو گے،کیا تمیں موسٰی کا حال معلوم نہیں؟”
"ہم اپنی ہلاکتوں کے ذمہّ دار خود ہوں گے،تو نقاب تو ہٹا۔”
"مرا ہر کام حکمت بھرا ہوتا ہے ،حکمت نہیں کہ نقاب ہٹاؤں۔”
"یہ کیوں نہیں کہتا کہ ہم تیری حقیقت جان چکے ہیں ،کیا تو علاقہ مرو کا رہنے والا ہاشم نہیں؟
"میرے بہت سے نام ہیں اور کسی کے جسم میں بھی حلول کر سکتا ہوں”
"کیا یہ اسلامی عقیدہ ہے کہ روح حلول کر سکتی ہے؟”
میں قادر مطلق ہوں جو چاہوں کر سکتا ہوں”
"پہلے تو نقاب ہٹا اور دکھا کہ تو ہے کون ؟ہٹاتا کیوں نہیں نقاب؟”
علما اصرار کرتے رہے اور ابن مقنع انکار کرتا رہا پھر وہ وقت بھی آیا کہ وہ اتنا ڈرگیا کہ دونوں ہاتھ سے نقاب پکڑ کر بیٹھ گیا کہ کہیں وہ اٹھ کر نقاب نہ اتار لیں۔علما اس سے علمی سوال پوچھتے تو وہ شرط لگاتا کہ پہلے سجدہ کرو،پھر جواب دوں گا۔کچھ دیر بعد علماء کو باہر نکال دیا گیا اور لوگوں میں مشہور ہو گیا کہ وہ خدا سے بحث کرنے آئے تھے بھلا خدا سے بھی کوئی جیت سکا ہے وہ قائل ہو کر گئے ہیں۔
جاہل دیہاتیوں نے جب یہ سنا کہ علما بھی متاثر ہوئے ہیں اور اسے پہچان گئے ہیں تو ہم کس کھیت کی مولی ہیں سو جو بچے تھےوہ بھی اپنا ایمان خراب کرنے لگے اور اس کی جانب راغب ہوئے۔
"کش”کے قریب ہی ایک جگہ”نخش”نام کی تھی،پہاڑی علاقہ تھا جو درختوں سے ڈھکا رہتا تھا چاند کے سوا روشنی کا دوسرا ذریعہ نہ تھا۔جب چاند ہلال کی صورت میں ہوتا تو یہاں گھپ اندھیرا چھا جاتا تھا۔وہاں کے لوگوں نے اس کی شہرت سنی تو ابن مقنع کی شہرت سنی تو سوچا کہ اگر وہ خدا ہے تو ان مسئلہ حل کر سکتا ہے ورنہ پھر وہ خدا نہیں۔قبیلے کے چند افراد اس کے پاس گئے اور جا کر اپنا مدعا بیان کیا۔
"ہم نے سنا ہے کہ تو ہی خدا ہے؟”
"خدا خود کو منوانے کے لئے دلیلیں پیش نہیں کرتا ، تمہیں ماننا ہے تو خود ہی مان لو گے، میری رحمتیں تو سب کے لئے ہیں وہ بھی کہ جو ایمان لائے اور جو نہ لائے ان کے لئے بھی”
"اگر تو خدا ہے تو تیرے ہاتھ میں سب کچھ ہوگا”
"ہاں سب کچھ ہے۔”
"ہم جہاں رہتے ہیں وہااں بہت اندھیرا ہے،چاند کی روشنی ہمارے لئے بہت فائدہ مند ہے،لیکن مصیبت جب آتی ہے جب چاند گھٹتا اور بڑھتا ہے ، تو چاند کی روشنی کو 1حالت پر کر دے”
"کر تو سکتا ہوں لیکن کائنات کا نظام تتر بتر ہو جائے گا”
"پھر تو کیسا خدا ہے؟”
"میں 1کام کر سکتا ہوں کہ تمہارے لئے 1دوسرا چاند بنا دوں جو آسمان پر چمکا کرے اور اسکی روشنی ہمیشہ 1سی حالت پر رہے گی۔”
"ہمیں تو روشنی سے مطلب ہے،اچھا ہے اگر ہمیں 2چاند کی روشنی مل جائے۔”
"میں اپنی خدائی سے یہ کام سرانجام دوں گا”
"ہماراپورا قبیلہ تجھ پر ایمان لائے گا اور تیرے دشمنوں سے لڑے گا”
اس کے بعد انہوں نے اسے سجدہ کیا اور چلے گئے،ان کے جانے کے بعد ابن مقنع سوچ میں پڑ گیا،اب اس کی خدائی کا انحصار دوسرے چاند کی طلوع ہونے پر تھا،اسکی مہماتی طبیعت نے وعدہ تو کر لیا تھا لیکن یہ کوئی معمولی ایجاد نہ تھی،اس نے اپنی خواب گاہ میں ایسے مصنوعی ستارے تو ایجاد کر لئے تھے کہ جو ہوا میں معلق اور چمکتے تھے لیکن اند بنانا اور اس کو میلوں دور آسمان پر ہوا میں بلند رکھنا یہ تو معجزاتی کام تھا۔اس نے سوچ لیا تھا کہ اب یا تو وہ ایسا چاند بنا لے گا یا پھر وہ خاموشی سے کہیں روپوش ہو جائے گا۔
جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Advertisements

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Best Urdu Books

Worlds Largest Free Online Islamic Books | Islamic Books in Urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.net

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

Amna Art Studio

Maker of art and artsy things, art teacher, and loud thinker

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

Pressure Cooker

Where I brew the stew to feed inner monsters...

My Blog

Just another WordPress.com site

%d bloggers like this: