20رمضان المبارک :فتح مکّہ: حصّہ اوّل

فتح مکہ10رمضان سن 8ھ بمطابق جنوری 630ء
گزشتہ آسمانی کتابوں میں آخری نبی ﷺ کی جو نشانیاں وضاحت سے بیان ہوئیں ان میں ایک نشانی آبائی شہر مکّہ مکرمہ کی فتح بھی ہے۔ بائبل نے دس ہزار قدسیوں کے جس لشکر کا ذکر کیا ہے یہ وہی تعداد ہے جو اس معرکے میں محسن انسانیت ﷺ کے ہمرکاب تھی۔ہندو آج تک جس چوہدویں اوتار کا انتظار کررہے ہیں اسکی نشانیوں میں سے بھی ایک نشانی اپنے آبائی دیس کو فتح کرنا شامل ہے۔ یہ اﷲ تعالی کی طرف سے اپنے آخری نبی ﷺ کو دیے گئے انعامات میں سے ایک خاص انعام ہے کہ جہاں کی زمین محسن انسانیت ﷺ پر تنگ کر دی گئی اور ہجرت پر مجبور کر دیا گیا ٹھیک آٹھ سال کے بعداﷲ رب العزت نے اس شہرکے دروازے آپ کے لیے کھول دیے۔ آٹھ سال قبل انتہائی رنجیدگی کے عالم میں حضور ﷺ  اپنے یار غار کو ساتھ لے کر رات کی تاریکی میں مکّہ سے ہجرت فرما کر اپنے وطن عزیز کو خیر باد کہہ دیا تھا۔ اور مکّہ سے نکلتے وقت خدا کے مقدس گھر خانہ کعبہ پر ایک حسرت بھری نگاہ ڈال کر یہ فرماتے ہوئے مدینہ روانہ ہوئے تھے کہ “اے مکّہ ! خدا کی قسم ! تو میری نگاہ محبت میں تمام دنیا کے شہروں سے زیادہ پیارا ہے۔ اگر میری قوم مجھے نہ نکالتی تو میں ہرگز تجھے نہ چھوڑتا۔ لیکن 10رمضان 8 ہجری کی اب یہی وہ مسرت خیز تاریخ ہے کہ آپ نے ایک فاتح اعظم کی شان و شوکت کے ساتھ اسی شہر مکّہ میں نزول اجلال فرمایا اور کعبۃ اللہ میں داخل ہو کر اپنے سجدوں کے جمال و جلال سے خدا کے مقدس گھر کی عظمت کو سرفراز فرمایا۔
فتح مکہ جس کے بارے میں 5ہجری میں آپ ﷺ نے غنودگی کی حالت میں ایک منظریہ بھی ملاخطہ کیا کہ مسلمان سرمنڈائے بلا خوف وخطر مسجد الحرام میں داخل ہوگئے ۔تاہم انھیں مکّہ میں داخلے کی اجاز ت نہ دی گئی اورحدیبیہ کے مقام پرقریش کے ساتھ ان کا ایک معا ہدہ طے پاگا ، اس صلح نامہ میں ایک شرط یہ بھی تھی دس سال تک فریقیں کے درمیان جنگ نہ ہو گی اور عرب قبائل جس فریق کے ساتھ چاہیں گے مل سکیں گے۔ دو قبائل جو باہم دشمن تھے ان میں سے بنو بکرقریش مکّہ کے ساتھ مل گئے اور بنو خزاعہ مسلمانوں کے حلیف بن گئے۔یہ شرط بظاہر مسلمانوں کے خلاف جاتی تھیں،تاہم اس صلح کے بعد نازل ہونے والی ان آیات  میں اس معاہدے کو فتح مبین  کانام دیاگیا۔ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے ارشاد فرمایا:اِنَّا فَتَحْنَا لَكَ فَتْحًا مُّبِینًاۙ۔۱ لِّیغْفِرَ لَكَ اللّٰهُ مَا تَقَدَّمَ مِنْ ذَنْۢبِكَ وَ مَا تَاَخَّرَ وَ یتِمَّ نِعْمَتَهٗ عَلَیكَ وَ یهْدِیكَ صِرَاطًا مُّسْتَقِیمًاۙ۔اے نبیﷺ ! (یقیناً ) ہم نے تم کو کھلی فتح عطا کر دی۔تاکہ اللہ تمہاری اگلی پچھلی ہر کوتاہی سے در گزر فرمائے اور تم پر اپنی نعمت کی تکمیل کر دے اور تمہیں سیدھا راستہ دکھائے ۔
صلح حدیبیہ کے دوسال بعد ہی ثابت ہوگیا کہ یہ صلح حقیقی فتح تھی ۔قریش کے چند سرکردہ سرداروں مثلا خالد بن ولید، عمروبن العاص نے اسلام قبول کرلیا، جس سے اسلام کو اکناف عرب عبور کرجانے کا موقع ملا۔اہل یہود کی ریشہ دوانیوں کاخاتمہ ہوگیااورحکم رانوں کو لکھے گئے مراسلات کے نتیجے میں دین اسلام عرب کے چاروں اورپھیل گیا۔صلح حدیبیہ دس سال کے لیے ہوئی تھی مگر صلح حدیبیہ کے دوسال بعد 630ء کے بالکل شروع میں رات کے وقت جب بنو بکر نے بنو خزاعہ پر حملہ کیاتوانھیں قریش کی آشیرباد حاصل تھی ۔انھوں نے بنو خزاعہ کے سوئے ہوئے لوگوں کو بے دریغ قتل کردیا۔ بچ نکلنے والوں نے حرم میں پناہ لے لی ، لیکن حرم کے تقدس کوپامال کرتے ہوئے انھیں بھی قتل کردیاگیا۔قریش نے بنو بکر کی مدد بھی کی تھی یہ بات راز نہ رہ سکی۔ یہ صلح حدیبیہ کا اختتام تھا۔ مسلمان اس وقت تک بہت طاقتور ہو چکے تھے۔ قبیلہ بنو خزاعہ نے اہل وفد مدینہ بھیجا جہاں ان کا ایک نمائندہ سردار بدیل بن ورقہ نےحضور ﷺ سے فریاد کی اور ایک شاعر عمرو ابن خزاعہ نے دردناک اشعار پڑھے اور بتایا کہ وہ  وتیرہ  کے مقام پر رکوع و سجود میں مشغول تھے تو قریش نے ان پر حملہ کر دیا اور ہمارا قتلِ عام کیا۔ حضور ﷺ نے اس کو کہا کہ ہم تمہاری مدد کریں گےپھر اپنا ایک نمائندہ قریش مکّہ کے پاس روانہ کیا جس نے سرداران قریش کے سامنے تین شرائط پیش کیں1۔ بنو خزاعہ کے مقتولین کا خون بہا ادا کیا جائے اور انکے نقصان کا ازالہ کیا جائے۔ یا2- قریش مکّہ اپنے دوست قبیلے بنو بکر کاساتھ چھوڑ دیں اور انکی حمایت سے دستبردارہو جائیں۔ یا3-صلح نامہ حدیبیہ کو منسوخ کر دیا جائے۔ قریش کے سرداران نے تکبر میں آکر تیسری شرط قبول کر لی اور اس طرح صلح حدیبیہ ڈھائی سال بعد اپنے انجام کو پہنچ گئی۔ قاصد کے روانہ ہوتے ہی قریش کو اپنی غلطی کا احساس ہوا تو انہوں نے فوراََ ابو سفیان کو مدینہ روانہ کیا۔ وہ معاہدہ کی تجدید کے لیے مدینہ پہنچ گیا ۔ ابوسفیان اپنی بیٹی امِ حبیبہ کے گھر پہنچا جو اسلام لے آئی تھیں اور حضور ﷺ کی زوجہ تھیں۔وہ سیدھا حضور ﷺ کے گھر پہنچا  حضرت امِ حبیبہ  نے اندر آنے کا راستہ دیدیا اندر داخل ہو کر ابو سفیان بستر پر بیٹھنا چاہا تو حضرت امِ حبیبہ نے بستر اور چادر لپیٹ دی اور ابوسفیان کو بیٹھنے نہ دیا۔ اس نے حیران ہو کر پوچھا کہ بستر کیوں لپیٹا گیا ہے تو حضرت ام حبیبہ رضی اللہ عنہا نے جواب دیا کہ  آپ مشرک ہیں اور نجس ہیں اس لیے میں نے مناسب نہ سمجھا کہ آپ رسول ﷺ کی جگہ پر بیٹھیں۔ جب ابوسفیان نے صلح کی تجدید کے لیے حضور ﷺ سے رجوع کیا تو انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا ۔ پھر اس نے حضرت ابوبکر،حضرت عمر،حضرت عثمان اور حضرت علی سے بالترتیب الگ الگ ملا۔ سب نے آپ ﷺ سے ملنے کا مشورہ دیا جب ابو سفیان نے آپ ﷺ کے بارے میں بتایا کہ وہ ﷺ نہیں مانے تو سب نے اپنی بے بسی کا اظہار کر دیا۔ ابو سفیان نے سخت غصے اور مایوسی میں تجدیدِ صلح کا یکطرفہ اعلان کیا لیکن ظاہر ہے معاہدے ہمیشہ دو طرفہ ہوا کرتے ہیں یک طرفہ معاہدے کی کوئی حیثیت نہیں ہوتی۔۔ ابو سفیان اس ناکام سفارت کے بعداپنے اونٹ پر سوار ہوااور مکّہ سدھار گیا۔
10رمضان المبارک 8 ہجری کو رسول اکرم ﷺ دس ہزار کے لشکر کے ساتھ مدینہ سے روانہ ہوئے اور مکّہ کی الٹ سمت چل کھڑے ہوئے اور دعا کی کہ اے بار الہ ہمارا ارادہ دشمن سے خفیہ رکھنا اور اس تک ہر اطلاع کے دروازے مسدود کر دینا ۔دو سال قبل جب آپ ﷺ عمرہ کے لیے تشریف لے گئے تھے توایک ہزار چھ سو [اور بعض روایات کے مطابق چودہ سو، جب کہ بعض کے مطابق پندرہ سو]صحابہ کرام آپ ﷺ کے ہم راہ تھے ۔اسی موقع پر حدیبیہ کامعاہدہ طے پایاتھا ۔اس کے بعد امن وامان قائم ہونے کی وجہ سے بہت سے لوگوں کواسلام کے بارے میں ازسرنوسوچنے سمجھنے کاموقع مل گیااور انھوں نے اسلام قبول کرلیا۔ جیساکہ آپ ﷺ کامعمول تھا،آپ ﷺ اس قسم کی سرگرمیوں کو بڑی رازداری میں رکھتے تھے ، اس موقع پر بھی کوئی نہ جانتا تھا کہ حضور ﷺ کس طرف کوروانہ ہونے والے ہیں ،حتی کہ آپ ﷺ کی ازواج مطہرا ت اور ابوبکر و عمر جیسے کبار صحابہ بھی بے خبرتھے ۔ جب ابوبکر نے ام المومنین عائشہ سے دریافت کیاکہ حضور ﷺ کاارادہ کس طرف کا ہے؟تو انھوں نے جواب دیا۔  اباجان!مجھے کچھ معلوم نہیں ۔ حضور ﷺ نے دعا بھی کی اللھم خذ علی قریش اسماعھا وابصارھا الہی قریش کے کانوں اور آنکھوں کو اپنی گرفت میں لےلے (تاکہ ہم اچانک ان کے سروں پر ٹوٹ پڑیں)۔ تاہم مہاجرین میں سے حاطب بن بلتعہ نے اندازہ کرلیاکہ آپ ﷺ مکّہ کی طر ف پیش قدمی کاارادہ رکھتے ہیں اس نے ایک عورت کی چوٹی میں رقعہ باندھ کرقریش کو اطلاع کرنا چاہی حضو ر ﷺ کو بہ ذریعہ وحی مطلع کردیا گیا توآپ ﷺ نے علی ،زبیر [اورمقداد]کو حکم دیاکہ وہ حاطب کی پیغام برعورت سے وہ خط چھین لائیں ، چناں چہ صحابہ آپ ﷺ کے حکم پراس سے خط چھین لائے۔ نبی کریم ﷺ کے ساتھ دس ہزارجاں نثار تھے، جب راستہ میں حضرت عباس بن عبدالمطب اپنے اہل و عیال کے ساتھ آپ سے ملے۔ وہ مسلمان ہو کر مدینہ آ رہے تھے۔ آپ ﷺ کے چچیرے بھائی اور پھوپھی زاد بھائی بھی راستے میں آپ سے ملے اب وہ بھی مسلمان ہو چکے تھے۔
جاری ہے۔۔۔۔۔
1 comment
  1. ماشاء الله
    خوبصورت اور ايمان افروز تحرير ـ
    جزاك الله خير ـ

اپنی رائے دیجئے

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

Pak Islamic Library

Authentic Islamic Books

اردو سائبر اسپیس

Promotion of Urdu Language and Literature

سائنس کی دُنیا

اُردو زبان کی پہلی باقاعدہ سائنس ویب سائٹ

~~~ اردو سائنس بلاگ ~~~ حیرت سراے خاک

سائنس، تاریخ، اور جغرافیہ کی معلوماتی تحقیق پر مبنی اردو تحاریر....!! قمر کا بلاگ

BOOK CENTRE

BOOK CENTRE 32 HAIDER ROAD SADDAR RAWALPINDI PAKISTAN. Tel 92-51-5565234 Email aftabqureshi1972@gmail.com www.bookcentreorg.wordpress.com, www.bookcentrepk.wordpress.com

اردوادبی مجلّہ اجرا، کراچی

Selected global and regional literatures with the world's most popular writers' works

Urdu Islamic Books

islamic books in urdu | Best Urdu Books | Free Urdu Books | Urdu PDF Books | Download Islamic Books | besturdubooks.wordpress.com

ISLAMIC BOOKS HUB

Free Authentic Islamic books and Video library in English, Urdu, Arabic, Bangla Read online, free PDF books Download , Audio books, Islamic software, audio video lectures and Articles Naat and nasheed

عربی کا معلم

وَهٰذَا لِسَانٌ عَرَبِيٌّ مُّبِينٌ

International Islamic Library Online (IILO)

Contact Us: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

Taleem-ul-Quran

Khulasa-e-Quran | Best Quran Summary

Al Waqia Magazine

امت مسلمہ کی بیداری اور دجالی و فتنہ کے دور سے آگاہی

TowardsHuda

The Messenger of Allaah sallAllaahu 3Alayhi wa sallam said: "Whoever directs someone to a good, then he will have the reward equal to the doer of the action". [Saheeh Muslim]

آہنگِ ادب

نوجوان قلم کاروں کی آواز

آئینہ...

توڑ دینے سے چہرے کی بدنمائی تو نہیں جاتی

بے لاگ :- -: Be Laag

ایک مختلف زاویہ۔ از جاوید گوندل

اردو ہے جس کا نام

اردو زبان کی ترویج کے لیے متفرق مضامین

آن لائن قرآن پاک

اقرا باسم ربك الذي خلق

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

AhleSunnah Library

Authentic Islamic Resources

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

منہج اہل السنة

اہل سنت والجماعۃ کا منہج

waqashashmispoetry

Sad , Romantic Urdu Ghazals, & Nazam

!! والله أعلم بالصواب

hai pengembara! apakah kamu tahu ada apa saja di depanmu itu?

Life Is Fragile

I don’t deserve what I want. I don’t want what I have deserve.

I Think So

What I observe, experience, feel, think, understand and misunderstand

creating happiness everyday

an artist's blog to document her creativity, and everyday aesthetics

mindandbeyond

if we know we grow

Muhammad Altaf Gohar | Google SEO Consultant, Pakistani Urdu/English Blogger, Web Developer, Writer & Researcher

افکار تازہ ہمیشہ بہتے پانی کیطرح پاکیزہ اور آئینہ کیطرح شفاف ہوتے ہیں

بے قرار

جانے کب ۔ ۔ ۔

سعد کا بلاگ

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام

دائرہ فکر... ابنِ اقبال

بلاگ نئے ایڈریس پر منتقل ہو چکا ہے http://emraaniqbal.comے

Kaleidoscope

Urban desi mom's blog about everything interesting around.

I am woman, hear me roar

This blog contains the feminist point of view on anything and everything.

تلمیذ

Just another WordPress.com site

سمارا کا بلاگ

کچھ لکھنے کی کوشش

Guldaan

Islam, Pakistan and Politics

کائنات بشیر کا بلاگ

کہنے کو بہت کچھ تھا اگر کہنے پہ آتے ۔۔۔ اپنی تو یہ عادت ہے کہ ہم کچھ نہیں کہتے

Muhammad Saleem

Pakistani blogger living in Shantou/China

Writer Meets World

Using words to conquer life.

Musings of a Prospective Shrink

sugar spice and everything nice

Aiman Amjad

think, discuss, review and express...

%d bloggers like this: